خادم پنجاب ترقیاتی بجٹ خرچ نہ کرنے کی تحقیق کرائیں

03 مئی 2014

پنجاب میں رواں مالی سال میں جولائی سے مارچ 9 ماہ کیلئے ترقیاتی بجٹ کا استعمال مقررہ ہدف سے ایک کھرب 34 ارب 41 کروڑ 90 لاکھ روپے کم ہُوا ہے۔ حکومت پنجاب نے رواں مالی سال کے پہلے 9 ماہ کیلئے ترقیاتی بجٹ کے استعمال کا ہدف 2 کھرب 17 ارب 50 کروڑ روپے مقرر کیا تھا۔
حکومت نے عوام کی فلاح و بہبود اور ترقیاتی منصوبوں کیلئے جو بجٹ مقرر کیا تھا نااہل اور محکموں کے سست افسران نے اس بجٹ کو خرچ نہ کر کے عوام کے حق پر ڈاکہ ڈالا ہے۔ 9 ماہ کے اندر 2 کھرب 17 ارب 50 کروڑ روپے خرچ کرنے تھے لیکن بیورو کریسی نے نااہلی دکھائی ہے جبکہ غریب کے مسائل جوں کے توں ہیں۔ وزیر اعلیٰ کا کام ترقیاتی منصوبوں کیلئے بجٹ جاری کرنا ہے کوئی لینے کیلئے تو جائے لیکن یہاں بیورو کریٹ اس قدر کام چور ثابت ہوئے ہیں کہ وہ عوام کیلئے رکھی گئی رقم کو عوام پر خرچ کرنے کیلئے بھی تیار نہیں۔ اب 9 ماہ کے اندر مقررہ ہدف پر جو رقم خرچ نہیں ہوئی حکومت اس رقم کو لاہور، پنڈی جیسے بڑے شہروں میں خرچ کر دیتی ہے تو پھر تختِ لاہور کو للکارا جاتا ہے۔ حکومت کا مقرر کردہ ترقیاتی بجٹ اگر خرچ نہیں ہو گا تو عوام لازمی طور پر حکومت ہی کو موردِ الزام ٹھہرائیں گے۔ لہٰذا خادمِ پنجاب بیورو کریسی اور محکموں کے کرتا دھرتائوں کی گوشمالی کریں تاکہ عوام جمہوریت کے پھل سے کماحقہ مستفید ہو سکیں۔