کراچی ....متحدہ کے رہنما فاروق بیگ سمیت مزید آٹھ افراد ٹارگٹ کلنگ کا شکار بینک بتیس گاڑیاں نذر آتش

03 مئی 2011
کراچی (کرائم رپورٹر + خصوصی رپورٹر + مانیٹرنگ ڈیسک) کراچی میں ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ گذشتہ روز بھی جاری رہا۔ متحدہ کے رہنما فاروق بیگ سمیت مزید 8 افراد ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بن گئے جبکہ 2 درجن سے زائد زخمی ہو گئے۔ فاروق بیگ کے قتل پر بازار‘ دکانیں‘ پٹرول پمپ بند ہو گئے۔ مشتعل کارکن نے ہنگامہ آرائی کی اور ایک بنک 32 گاڑیاں نذر آتش کر دیں جبکہ شہر میں بدترین ٹریفک جام رہا جس پر شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جبکہ الطاف نے کارکنوں سے اپیل کی ہے کہ وہ صبر و تحمل کا مظاہرہ کریں۔ تفصیلات کے مطابق فاروق بیگ لانڈھی میں اپنی رہائش گاہ سے کار میں متحدہ کے مرکز نائن زیرو جا رہے تھے کہ راستے میں نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ کردی۔ انہیں ہسپتال لیجایا گیا جہاں ڈاکٹروں نے انکی موت کی تصدیق کر دی۔ مقتول متحدہ کی تنظیمی کمیٹی کے رکن اور سابق سیکٹر انچارج تھے۔ واقعہ کے بعد کئی علاقوں میں خوف و ہراس پھیل گیا اور مشتعل کارکن سڑکوں پر نکل آئے‘ اس دوران کورنگی میں نامعلوم افراد نے ٹرک پر فائرنگ کرکے ڈرائیور اور مزدور کو جاں بحق کر ڈالا۔ اورنگی میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے محمد سلیم‘ گلشن معمار میں آڑھتی مہاجر خان پاک کالونی میں کامران اور ہمایوں‘ طارق روڈ پر نامعلوم نوجوان جاں بحق ہو گئے جبکہ متحدہ کے رہنما کے قتل کیخلاف اور دیگر علاقوں میں فائرنگ کا سلسلہ شروع ہو گیا جس میں دو درجن سے زائد افراد زخمی ہو گئے رینجرز اور پولیس کے دستے متاثرہ علاقوں میں پہنچ گئے۔ وزیراعلی سندھ نے واقعہ کی رپورٹ طلب کر لی۔ وزیر اطلاعات سندھ شرجیل میمن نے بتایا کہ کراچی سے 98 شرپسند گرفتار کر لئے۔ ایم کیو ایم کی رابطہ کمیٹی نے فاروق بیگ کے قتل کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ متحدہ کے ذمہ داروں کی ٹارگٹ کلنگ رکوائی جائے۔
کراچی