بھارتی مداخلت بند نہ ہوئی تو نتائج اچھے نہیں ہوں گے: سلمان بشیر

03 مارچ 2010
اسلام آباد (اے این این)سیکرٹری خارجہ سلمان بشیر نے کہا ہے کہ بھارتی ہم مصنب سے ملاقات میں کوئی بریک تھروہوا نہ بھارتی پوزیشن میں تبدیلی نظر آئی‘ خدشہ ہے تعلقات 2004ءکی پوزیشن سے پیچھے نہ چلے جائیں‘ بھارت حافظ سعید کے بیان کی دو لائنیں لے کر تعلقات کو بلاک کررہا ہے‘ بال ٹھاکرے کے بیانات پر ہمیں بھی تشویش ہے‘ بھارت میں لوگوں کو تعصب اور شدت پر اکسانے والے گروپوں کا محاسبہ ہونا چاہئے‘ دریاﺅں پر ڈیموں کی تعمیر معاہدے کی خلاف ورزی ہے‘ بھارتی مداخلت کے شواہد کسی کو دینے کی ضرورت نہیں‘ بھارت جو کچھ کررہا ہے اس سے آگاہ ہے مداخلت بند نہ ہوئی تو نتائج اچھے نہیں ہوں گے بھارت کی مرضی اور مقاصد کے مذاکرات قبول نہیں معنی خیز مذاکرات کےلئے تیار ہیں‘ دہشت گردی بھارت سے زیادہ ہمارا مسئلہ ہے‘ دنیا دہشت گردی کے خاتمے کےلئے پاکستان کی کوششوں سے آگاہ ہے‘ بھارت میں بیٹھ کر تبصرے کرنے سے ہمیں کوئی فرق نہیں پڑتا۔ نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بھارتی سیکرٹری خارجہ سے مذاکرات نہیں ملاقات ہوئی تھی جس کا مقصد ایک دوسرے کی پوزیشن کو سمجھنے کی کوشش کرنا تھا‘ انہوں نے کہا کہ بھارت پر واضح کر دیا ہے کہ یہ نہیں ہو سکتا کہ بھارت جب چاہے مذاکرات شروع کر دے اور جب چاہے بند کر دے نہ پاکستان بھارت کی مرضی کے ایجنڈے کا پابند ہے۔ بھارت میں پاکستان کے خلاف تعصب کا اظہار آئی پی ایل میں پاکستانی کھلاڑیوں کو نہ لینے سے واضح ہوتا ہے بھارت میں انتہا پسند گروپ لوگوں کو تعصب اور شدت پر اکساتے ہیں۔