وسط افریقی جمہوریہ: فائرنگ، امن مشن میں شامل فوجی ہلاک،8 زخمی

03 اگست 2015

پورٹ نووا (اے پی پی+ اے ایف پی) مغربی افریقی ملک بنین کے صدر ٹامس بونی یایی نے شدت پسند تنظیم بوکو حرام کے خلاف جاری لڑائی کے لیے 800 فوجی مہیا کرنے کا اعلان کیا ہے۔ ذرائع ابلاغ کی رپورٹ کے مطابق نائجیریا کے صدر محمد بخاری کے ساتھ ملاقات کے بعد بونی یایی نے ابوجا حکومت کے ساتھ یک جہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ علاقائی سطح پر قیام امن کے لیے دیگر رہنماؤں کے ساتھ ہیں۔ بوکو حرام کی عسکریت پسندی سے پیدا ہونے والے خطرات اب نائجیریا کے علاوہ چاڈ اور کیمرون تک پھیل چکے ہیں۔ انہی خطرات سے نمٹنے کے لیے علاقائی رہنماؤں نے اب ایک کثیر القومی فورس تشکیل دی ہے، جس میں متعدد ممالک کے دستے شامل ہوں گے۔ اس فورس کا کام بوکو حرام کی خونریز کارروائیوں کا خاتمہ ہو گا۔ ادھر نائیجیریا میں بوکوحرام کے ٹھکانوں پر بمباری میں بیسیوں جنگجو مارے گئے۔ بوکو حرام کے جنگجوئوں نے نا ئجیریا کے گائوں پر حملہ کر دیا ۔13 افراد مارے گئے۔ وسط افریقی جمہوریہ میں فائرنگ کے واقعہ میں امن مشن میں شامل فوجی ہلاک اور 6 زخمی ہو گئے۔