A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: category_data

Filename: frontend_ver3/Templating_engine.php

Line Number: 35

پیپلز پارٹی کسی بھی صوبے کی تقسیم کیخلاف ہے‘ زرداری کا پنجاب اسمبلی میں پیغام

02 جولائی 2009
لاہور + اسلام آباد (نیوز رپورٹر + مانیٹرنگ نیوز + ایجنسیاں) صوبائی وزیر خزانہ تنویر اشرف کائرہ نے کہا ہے کہ صدر زرداری نے یقین دہانی کرائی ہے کہ صوبوں کی تقسیم نہیں ہو گی‘ دوسری جانب صدر زرداری نے سرائیکی صوبے کی حمایت میں پارٹی ارکان کے بیانات کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ارکان کو بیان بازی سے روک دیا ہے۔ اے پی پی کے مطابق پنجاب اسمبلی کے اجلاس کے دوران صوبائی وزیر خزانہ پنجاب تنویر اشرف کائرہ نے صدر زرداری کا ایک پیغام پڑھ کر سنایا جس میں کہا گیا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب سمیت کسی بھی صوبے کی تقسیم کے سخت خلاف ہے۔ لہٰذا پی پی پی کے بارے میں یہ رائے قائم کرنا کہ وہ پنجاب سمیت کسی بھی صوبے کی تقسیم کی حامی ہے قطعاً درست نہ ہے۔ صدر زرداری نے اپنے پیغام میں مزید کہا کہ وہ اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ صوبوں کو ان کے مکمل حقوق ملنے چاہئیں تا کہ وہ آئین و قانون کے مطابق اپنے امور سرانجام دے سکیں۔ پیغام میں مزید کہا گیا ہے کہ پی پی پی کی اتحادی حکومت ملک میں نئی روایات کو فروغ دے رہی ہے جبکہ تمام معاملات میں تمام سیاسی جمہوری قوتوں اور پارلیمنٹ کو اعتماد میں لیا جا رہا ہے تاکہ ملک و قوم کے بہترین مفاد میں تمام تر فیصلے باہمی مشاورت اور تمام ساتھیوں کی آراء کی روشنی میں کئے جا سکیں۔ ثناء نیوز کے مطابق ذرائع کا کہنا ہے کہ گذشتہ روز ایوان صدر میں پارٹی ارکان سے ملاقات کے دوران صدر زرداری نے ارکان اسمبلی کو ہدایت کی ہے کہ وہ نئے ایشوز میں نہ الجھیں اور جنوبی پنجاب کو نیا صوبہ بنانے کی مہم میں شریک نہ ہوں۔ صدر نے کہا ہم نئے صوبوں کے قیام کے مخالف نہیں مگر یہ تقسیم نہیں متحد اور پاکستان کی بقاء کی جنگ لڑنے کا وقت ہے۔ آن لائن کے مطابق تنویر اشرف کائرہ نے پوائنٹ آف آرڈر پر بات کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کی تقسیم کے خلاف ہے، صوبے کو تقسیم کرنے کا مطالبہ کرنے والے ملک کے خلاف سازش کر رہے ہیں جس کو ہر صورت ناکام بنا دیا جائے گا۔ نیوز رپورٹر کے مطابق انہوں نے کہا کہ صدر صوبوں اور وفاق کے درمیان یکجہتی کی علامت ہیں اور وہ تمام صوبوں سے برابری کے تعلقات کے خواہاں ہیں اور پیپلز پارٹی اور حکومت چاروں صوبوں کو مساوی سمجھتی ہے اور انہیں برابر کے حقوق دئیے جائیں گے۔ اے این این کے مطابق اجلاس کے اختتام پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ نے کہا کہ ہم پیپلز پارٹی کی وضاحت کو ویلکم کرتے ہیں ہم نے تو پہلے ہی کہہ دیا تھا یہ مطالبہ بے وقت کی راگنی ہے یہ پاکستان اور پنجاب کے خلاف سازش ہے اس سے آگے چل کر مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب تقسیم نہیں ہو گا جہاں تک جنوبی پنجاب کے عام افراد کا تعلق ہے تو ان کا احساس محرومی دور کرنے کے لئے حکومت نے ترقیاتی فنڈز کا رخ جنوبی پنجاب کی طرف کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ الگ صوبے کا مطالبہ جنوبی پنجاب کی ایلیٹ کلاس اپنے مفادات کے لئے کر رہی ہے۔ سینئر مشیر سردار ذوالفقار کھوسہ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نئے صوبے کے نام پر پنجاب کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازش کی گئی تو مرکز بھی محفوظ نہیں رہے گا‘ کچھ لوگ ذاتی مفادات کے لئے شوشے چھوڑ رہے ہیں۔