2018 تبدیلی کا سال, آئندہ الیکشن ملک کی تقدیر بدل دیگا: عمران خان

01 اپریل 2018 (20:10)


2018 تبدیلی کا سال ہے اور آئندہ الیکشن ملک کی تقدیر بدل دے گا۔ عمران خان
اگر خیبر پختونخوا کی پولیس بہتر نہ ہوتی تو محمد نواز شریف سوات میں تقریر نہیں کر سکتے
اقتدار میں آ کر لاہور میں درخت لگائیں گے، شہریوں کو صاف پانی فراہم کریں گے
محمدنواز شریف نے کہا ترقی نظر نہیں آ رہی، شاید پاناما کے بعد ان کی نظر کمزور ہو گئی ہے
ٹھوکر نیاز بیگ اوریوحنا آباد میں ممبر سازی مہم کے دوران عمران خان کا خطاب
#/H
آئٹم نمبر۔۔۔108
لاہور(صباح نیوز)پاکستان تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اب ملک کی تقدیر بدلنے کا وقت آ گیا ہے 2018 تبدیلی کا سال ہے اور آئندہ الیکشن ملک کی تقدیر بدل دے گا۔ اگر خیبر پختونخوا کی پولیس بہتر نہ ہوتی تو نواز شریف سوات میں تقریر نہیں کر سکتے تھے۔سوات میں نواز شریف نے کہا ترقی نظر نہیں آ رہی، شاید پاناما کے بعد ان کی نظر کمزور ہو گئی ہے۔ اسفند یار ولی خیبر پختونخوا میں نہیں جاتا تھا، نواز شریف اگر سوات میں جلسہ کر رہے ہیں تو پختونخوا کی پولیس اور ہمیں داد دیں۔ اگر خیبر پختونخوا کی پولیس بہتر نہ ہوتی تو نوازشریف سوات میں تقریر نہیں کر سکتے تھے، وہ سکولوں اور ہسپتالوں میں جا کر تبدیلی کا پوچھیں۔ انہوں نے کہا کہ میں 29 اپریل کو مینار پاکستان میں تاریخی جلسہ کریں گے جہاں بڑے اور چھوٹے شریف کو بتاں گا کیوں نکالا۔ٹھوکر نیاز بیگ پر کارکنوں سے خطاب میں عمران خان نے کہا کہ بڑے گاڈ فادر اور چھوٹے ڈان نے لاہور کو تباہ کر دیا۔ اسی لاہور میں الیکشن کے بعد درخت اگائیں گے اور ہسپتالوں کے نظام کو ٹھیک کریں گے۔ ہم ایسے ہسپتال بنائیں گے جس کے بعد کسی وزیرِ اعلی کو لندن علاج کے لیے نہیں جانا پڑے گا۔ 2018 کا الیکشن پاکستان کی تقدیر بدلے گا۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ بڑے چوروں کو پکڑیں گے تو ملک تبدیل ہو جائے گا۔ نواز شریف نے تیس ہزار ارب کی چوری کی، لیکن کہتے ہیں کہ میرے نام پر کچھ نہیں ہے، وزیرِ خارجہ نے اقامہ لیا ہوا ہے، خواجہ سعد رفیق بھی اربوں پتی بن گیا اور اسحاق ڈار منشی کے بچے بھی اربوں پتی بن گئے۔ قوم مقروض اور غریب ہوتی جا رہی ہے لیکن سارے ڈاکو امیر ہوتے جا رہے ہیں۔ قرضوں کی ادائیگی کی وجہ سے پٹرول مہنگا کر کے بوجھ عوام پر ڈالا جاتا ہے۔ اب ملک کی تقدیر بدلنے کا وقت آ گیا ہے۔ سب ممبر بنیں، 2018 کا الیکشن جیتیں گے۔عمران خان کا کہنا تھا کہ جب ہماری حکومت آئی تو خیبر پختونخوا میں دہشت گردی تھی لیکن ہم نے پولیس کے نظام میں اصلاحات کیں، نواز شریف کو ہمیں داد دینی چاہیے کہ آج بہتر پولیس کی وجہ سے وہ سوات میں تقریر کر رہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ بڑے گاڈ فادر اور چھوٹے ڈان نے لاہور میں بڑی تباہی کی، ہر طرف سیمنٹ نظر آ رہا ہے، ہم اقتدار میں آ کر لاہور کو بھی ٹھیک کریں گے۔انہوں نے کہا کہ لاہور جب تبدیل ہوتا ہے تو پنجاب تبدیل ہوتا ہے اور پنجاب میں تبدیلی کا مطلب پاکستان میں تبدیلی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اقتدار میں آ کر لاہور میں درخت لگائیں گے، شہریوں کو صاف پانی فراہم کریں گے۔عمران خان نے کہا کہ کون سا ملک ترقی کر سکتا ہے جب اس کا وزیراعظم اور سارے وزیر چوری کر رہے ہوں۔قبل ازیں یوحنا آباد میں ممبر سازی مہم کے دوران خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ دونوں شریف 30 سال سے پنجاب پولیس کو سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کر رہے ہیں، شریف برادران سیاستدان نہیں بلکہ مافیا ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ چھوٹا ڈان سب سے بڑا ڈرامہ ہے، کبھی ٹوپیاں پہن لیتا ہے اور کبھی بارش میں بوٹ پہن لیتا ہے، 2018 کا الیکشن جیت کر ان کا جو پیسا باہر پڑا ہے وہ ان سے نکلوا کر قوم پر خرچ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ سندھ میں بھی پیپلز پارٹی مخالف اتحاد بنائیں گے لیکن الیکشن میں کسی سے اتحاد نہیں کریں گے ، تحریک انصاف کے نئے پاکستان میں سب انسان برابر ہوں گے۔