جی سی یونیورسٹی فیصل آباد کی طالبہ کے قاتل قانون کی گرفت سے آزاد

01 اپریل 2018

فیصل آباد(صباح نیوز) جی سی یونیورسٹی کی طالبہ کے قاتل اب تک قانون کی گرفت سے آزاد ہیں۔فیصل آباد میں تین روز قبل جی سی یونیورسٹی کی طالبہ عابدہ کو نامعلوم افراد نے دن دیہاڑے اغوا اور زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کردیا تھا۔ طالبہ کی نعش ڈجکوٹ میں سیم نالے سے برآمد ہوئی تھی جبکہ پوسٹ مارٹم رپورٹ میں مقتولہ سے زیادتی کی تصدیق ہوگئی ہے۔ مقتولہ جی سی یونیورسٹی میں ایم اے انگریزی کیطالبہ تھی۔فیصل آباد پولیس اب تک کسی ایک بھی ملزم تک نہ پہنچ سکی ہے اور ملزمان قانون کی گرفت سے آزاد ہیں۔ پولیس نے شبہ میں 1 نوجوان کو حراست میں لیا تاہم تفتیش کے بعد چھوڑ دیا ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق اب تک واردات کا کوئی سرا ہاتھ نہیں آیا۔ لڑکی کا موبائل ڈیٹا حاصل کیا ہے امید ہے اس کے ذریعے ملزمان تک پہنچنے میں مدد ملے گی۔ملزمان کے گرفتار نہ ہونے کی وجہ سے طالبہ کے لواحقین غم کا شکار ہیں۔ عابدہ کے قتل پر سوشل میڈیا پر بھی شہری انصاف کی دہائی دے رہے ہیں۔ عابدہ کے والد کا کہنا ہے کہ ان کی بیٹی کو 5 روز قبل یونیورسٹی کے باہر کار سوار 4 افراد نے اغوا کیا اور اس واقعے میں یونیورسٹی کے طلبہ ہی ملوث ہیں، انہوں نے بیٹی کے اغوا کے خلاف تھانہ گلبرگ میں درخواست دی تھی لیکن پولیس نے چار روز چکر لگوانے کے باوجود مقدمہ درج نہیں کیا اور کہا کہ تمہاری بیٹی کسی کے ساتھ بھاگ گئی ہوگی۔