لاہور میں پھول تو کھل جاتے ہیں‘ عوام کو پینے کا پانی نہیں ملتا: بلاول بھٹو

01 اپریل 2018

سانگھڑ (صباح نیوز) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ عوامی مسائل حل کرنے کیلئے نہ کسی کے پاس منشور ہے نہ صلاحیت، عوام کو اس سے غرض نہیں کہ کس کو کیوں نکالا عوام اپنے مسائل کا حل چاہتے ہیں۔ سانگھڑ میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوںنے کہا کہ میرے لیے اس سے زیادہ خوشی کا کوئی لمحہ نہیں کہ تھر میں 240کلومیٹر طویل پانی کی لائن کا افتتاح کیا ہے بعض نام نہاد بڑی جماعتوں نے پچھلے 5سال سے صرف اپنی ذاتی لڑائی میں گزاردیئے گالی اور الزامازت کی سیاست تھی کرسی کی لڑائی میں لڑے اور عوام کیلئے کچھ نہ کیا عوامی مسائل پر بات تک نہیں کی ۔ عوامی مسائل حل کرنے کیلئے نہ ان کے پاس منشور ہے نہ ہی صلاحیت ہے مگر ہم پچھلے 5سال سے عوام کی خدمت کررہے ہیں ۔ تعلیم ، صحت ،روزگاراور صاف پانی عوام کے بنیادی مسائل ہیں جن پر ہم نے کام کیا سندھ میں دل کے مرض کے علاج کیلئے عالمی معیار کے ہسپتال بنائے ہیں جہاں بالکل مفت علاج ہوتا ہے کینسر کے علاج کیلئے سائبر نائف کی مشینیں لگائیں جہاں علاج کی مفت سہولیات فراہم کیں ۔ ن لیگ کی ملک دشمن پالیسی کی وجہ سے امیر امیر اور غریب غریب تر ہورہا ہے ۔ روزگار کے وسائل نہ ہونے کی وجہ سے غربت بڑھ رہی ہے ۔ غربت کم کرنے کیلئے سندھ حکومت نے غریب خواتین کو کاروبار کیلئے قرضے دیئے ۔ ہم نے چھ لاکھ خاندانوں کو غربت سے نکالا ۔ انہوںنے کہا کہ پورا ملک پانی کی کمی کا شکار ہے لیکن سندھ سب سے زیادہ متاثر ہے ۔وفاق اور ارساسندھ کو اپنے پانی کا حق کیلئے ترسا رہا ہے سندھ کو اپنے حصے کا پانی نہیں دیا جارہا ۔ ظلم تو یہ ہے کہ آج اس واٹر گاڈپر بھی عمل کیا جارہا ہے ۔ جب بھی نوازشریف اقتدار میں ہوتا ہے عوام کو پیاسا رکھتا ہے ۔ مگر ہم پاکستان کو پیاسا نہیںچھوڑیں گے جوپانی ملتا ہے اس کیلئے اقدامات کئے اور ہزاروں ایکڑ زمین کو آبادکیا لاہور میں پھول تو اُگ جاتے ہیں لیکن عوام کو پینے کا پانی نہیں ملتا ۔ ہماری نیت صاف ہے ہمیں عوام کے مسائل کا علم ہے اور حل بھی کرنا جانتے ہیں ۔ ہم عوام کیلئے سیاست کرتے ہیں آپ کسی بھی پتھر کو اٹھا کر دیکھ لیں تواس کی بنیاد میں پیپلزپارٹی ہی نظر آئے گی ۔ سانگھڑ پکار پکار کر کہہ رہا ہے کہ اسے تباہ کرنے والا فنکشنل لیگ ہے فنکشنل لیگ نے سانگھڑ میں اب تک کیا کیا ہے پیپلزپارٹی تو اب آئی ہے فنکشنل لیگ ہو یا ن لیگ ان کی سوچ عوام مخالف ہے گرینڈ الائنس سیاسی یتیموں کا ٹولہ ادھر اُدھر پھر رہا ہے ۔ یہ سب لوگ وزیرمشیر اور وزیر اعلی رہے گھوٹکی کے عوام نے ان کو ان کی حیثیت دکھا دی ہم نے سانگھڑ میں بھی بہت کام کئے ہیں ہم صوفی ازم کو ماننے والے ہیں ہم تمام مزارات کا احترام کرتے ہیں مگر ہمیں سیاست کو پیری مریدی سے الگ کرنا ہوگا۔ لوگ بڑی بڑی باتیں تو کرلیتے ہیں مگر جس نے قربانی اورخون دیا وہ صرف اور صرف میرے نانا شہید ذوالفقار علی بھٹو تھا میری ماں محترم بے نظیر بھٹوتھی ۔میں ان کی اولاد ہوں بھٹو شہید کا نواسا اور بی بی شہید کا بیٹا آج آپ سے وعدہ کرتا ہے کہ میں بھی کبھی آپ کو نہیں چھوڑوں گا ہر کامیاب منصوبے کی بنیاد ہم نے ڈالی ہے مسلم لیگ کا گھوڑا اب مردہ ہوگیا ہے اسے زندہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں فنکشنل لیگ نے 50سال سانگھڑ میں حکومت کی آج بھی وفاق میں ساتھ ہے مگر اس نے سانگھڑ میں کچھ نہیں کیا ۔ فنکشنل لیگ نے سانگھڑ کو ہمیشہ جاگیر اور عوام کو غلام سمجھا ہے فنکشنل لیگ نے سانگھڑ کو بے سہارا چھوڑ دیا تھا پیپلزپارٹی نے عو ام کی بہت خدمت کی ہے سب کوچھ ٹھیک نہیں ہوا ہمیں ابھی آپ کی اور خدمت کرنی ہے ہمارا یہ ماننا ہے کہ مستحکم صوبے ہی مضبوط وفاق کی علامت ہیں ۔ آج کل مسلم لیگ 18ویں ترمیم پر حملے کررہی ہے اس ترمیم کے تحت جو اختیارات صوبوں کو منتقل کئے تھے انہیں واپس لینے کی سازش کر رہی ہے ۔ انہوںنے تو پانچ سال تک این ایف سی ایوارڈ نہیں دیا میں واضح کرتا ہوں کہ پیپلزپارٹی 18ویں ترمیم پر کوئی حملہ برداشت نہیں کرے گی ۔ عوام خوشحالی اور روزگار روٹی کپڑا اور مکان چاہتے ہیں ۔ عوام کو اس سے کوئی غرض نہیں کہ کس کو کیوں نکالا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی حکومت آئی تو دہشتگردی تھی معاشی مسائل تھے مگر ہم نے اپنے دور میں ان میں بہتری لائی ۔ یہاں لوگ بیماریوں کا شکار ہیں بچے معذور پیدا ہوتے ہیں بچوں کی شرح اموات دنیا میں کئی ممالک سے زیادہ ہے ۔ مجھے یہ سب حقائق دیکھ کر رات کو نیندنہیں آتی میں یہ سوچتا ہوں کہ کیا ان کا ضمیر مرگیا ہے کیا نہیں خدا کا خوف نہیں۔