پاکستان کو ناکام ریاست کہنا فیشن بن چکا ہے: پروفیسر گریگوری

واشنگٹن (ندیم منظور سلہری سے) امریکی صدر بارک حسین اوباما کی پاک افغان سٹریٹجک پالیسی ریویو کے سابق چیئرمین اور بروکنگ انسٹیٹیوٹ کے سکالر بروس رائیڈل نے کہا ہے کہ پاکستان کو فیل سٹیٹ کہنا فیشن بن چکا ہے۔ پاکستان کے عوام پاکستان کو توڑنے کے حق میں نہیں اور نہ ہی وہ طالبان سٹیٹ چاہتے ہیں۔ پاکستان کے عوام کی حمایت امریکہ میں قومی مفاد میں ہے اس لئے اوباما نے پاکستان کی اقتصادی امداد تین گنا کردی۔ تجارتی تعلقات کی بہتری کیلئے مواقع تلاش کرنے اور پاکستان کے دوستوں کو ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف سے مزید امداد کی حوصلہ افزائی کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان تاریخ میں چوتھی مرتبہ جمہوریت کے استحکام کی کوششیں کررہا ہے لیکن کامیابی کی کوئی یقین دہانی نہیں کرائی جاسکتی۔ پروفیسر شان گریگوری یونیورسٹی آف بریڈ فورڈ انگلینڈ میں پاکستان سکیورٹی ریسرچ کے ڈائریکٹر کا کہنا ہے کہ پاکستان کو شدید مشکلات کا سامنا ہے لیکن پاکستان ایک ناکام ریاست نہیں ہے اور نہ ہی پاکستان کو توڑا یا ختم کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لاہور اور اسلام آباد میں مسلسل حملوں کے باوجود انتہاپسند اپنا اثر قائم نہیں کرسکے کیونکہ آئی ایس آئی اور فوج بہت مضبوط ہے۔ صوبہ سرحد اور فاٹا وفاق کے کنٹرول سے نکل گئے ہیں جو پاکستان کو کمزور ہونے کی نشاندہی کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے نیوکلیئر تنصیبات کو مسلم انتہاپسندوں سے خطرہ ہے کیونکہ پاکستانی آرمی اور آئی ایس آئی میں کچھ لوگوں کی ان سے ہمدردیاں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے کشمیر اور افغان قونصل خانے کے حوالے سے تحفظات جائز ہیں۔