اوباما انتظامیہ افغانستان میں کامیابی کیلئے پاکستان بھارت تعلقات میں بہتری چاہتی ہے: امریکی اخبار

واشنگٹن (چودھری افتخار) اوباما انتظامیہ افغانستان میں کامیابی کیلئے پاکستان بھارت تعلقات میں بہتری چاہتی ہے۔ اس سلسلے میں امریکی صدر نے گزشتہ سال دسمبر میں سفارتی کوششیں تیز کرنے کیلئے خفیہ ہدایات جاری کی تھیں۔ امریکی اخبار وال سٹریٹ جرنل نے اپنے ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ صدر بارک اوباما کی ہدایات کا مرکزی نقطہ یہ تھا کہ بھارت پر پاکستان کے ساتھ کشیدگی کم کرنے کیلئے دباﺅ بڑھایا جائے کیونکہ خطے میں مقاصد حاصل کرنے کیلئے یہ ایک اہم ترجیح ہے اور اس کے بغیر افغانستان پر اوباما انتظامیہ کو مطلوب پاکستانی تعاون حاصل کرنے کی کوششوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے رپورٹ کے مطابق اوباما انتظامیہ کے اندر اس بات پر بحث شدت اختیار کرگئی ہے کہ بھارت پر کس حد تک دباﺅ بڑھانا چاہئے\\\' خاص کر پنٹاگون نئی دہلی پر زیادہ دباﺅ کا خواہاں ہے اور حکام اس سلسلے میں پہلے ہی بھارت پر پاکستانی خدشات کو سنجیدگی سے لینے کیلئے دباﺅ ڈال رہے ہیں اور مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی تعداد میں کمی اور واپسی جسے آئیڈیاز بھی اندرونی بحثوں کا حصہ ہیں مگر محکمہ خارجہ بھارت پر دباﺅ کیلئے ایسی کوششوں کی مزاحمت کررہا ہے کیونکہ اس کا خیال ہے کہ اس کے نتائج الٹ بھی ہوسکتے ہیں۔ امریکی حکام کہتے ہیں کہ بھارت سے لاحق خطرات کم ہوئے بغیر پاکستان افغان سرحد کے ساتھ علاقوں میں عسکریت پسندوں کیخلاف لڑائی پر پوری طرح توجہ نہیں دے سکتا رپورٹ کے مطابق اوباما انتظامیہ نے فی الحال نئی دہلی سے چند مطالبے کئے ہیں جن میں پاکستانی خدشات دور کرنے کیلئے بھارت کی جانب سے افغان فوج کی تربیت کی حوصلہ شکنی شامل ہے۔ رپورٹ میں امریکی حکومت کے ایک اہلکار کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ پچھلے ماہ سٹرٹیجک ڈائیلاگ سے قبل پاکستان کی جانب سے امریکہ کو دیئے گئے 56 صفحات پر مشتمل مطالبات کی فہرست میں بھارت پر الزام لگایا گیا تھا کہ اس نے پاکستان کو ایک آزاد ریاست کے طور پر کبھی تسلیم نہیں کیا اور یہ کہ بھارت پاکستانی دریاﺅں کا پانی روکنے کے علاوہ بلوچستان میں علیحدگی پسندی کو ہوا دے رہا ہے۔ رپورٹ کے مطابق اوباما کی ہدایات پر بھارت کے متعلق پالیسی پر بحث کے بارے میں وائٹ ہاﺅس نے تبصرہ کرنے سے انکارکردیا ہے تاہم اخبار کا کہنا ہے کہ یہ ہدایات دسمبر میں صدر اوباما نے افغان جنگ کی پالیسی کے جائزہ کے بعد اعلیٰ خارجہ اور قومی سلامتی حکام کو دی تھی رپورٹ کے مطابق صدر اوباما کی جانب سے امریکی سفارتکاروں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ کشیدگی میں کمی کیلئے بھارت پر دباﺅ ڈالیں رپورٹ کے مطابق امریکی صدر کی ہدایت میں بھارت کو پاکستان سے تعلقات بہتر بنانے کو ترجیح قرار دینے کا کہا گیا رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکہ کی قومی سلامتی کے مشیر جیمز جونز کا دستخط کردہ میمورنڈم خارجہ پالیسی اور اعلیٰ سکیورٹی حکام کو بھیجا گیا تھا۔