ورلڈکپ 2019ءمیں ٹیمیں کم کرنے کا فیصلہ نہیں ہوا : رچرڈسن

ورلڈکپ 2019ءمیں ٹیمیں کم کرنے کا فیصلہ نہیں ہوا : رچرڈسن

سڈنی (سپورٹس ڈیسک) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے کہا ہے کہ ورلڈکپ 2019ءمیں ٹیموں کی تعداد کم کرنے کا فیصلہ ابھی نہیں کیا ہے۔ گذشتہ دنوں ٹیموں کی کمی کے حوالے سے خبر آئی تھی جس پر آئی سی سی پر کڑی تنقید ہو رہی ہے۔ آئی سی سی چیف ایگزیکٹو ڈیوڈ رچرڈسن نے کہا کہ میں نے ایسی کوئی بات نہیں کی ہے۔ میرے خیال میں آئندہ ورلڈکپ کے حوالے سے فیصلے اس میگا ایونٹ کے اختتام پر ہونگے۔ آئرلینڈ نے مسلسل تیسرے ورلڈکپ میں اپ سیٹ کیا ہے۔ افغانستان نے پہلی بار میچ میں کامیابی حاصل کر لی ہے۔ میں ٹیموں کی کارکردگی پر بہت زیادہ خوش ہوا ہوںلیکن کوالیفائرز ٹیموں کا ابھی بڑا امتحان باقی ہے۔ موجودہ فارمیٹ پر بھی کڑی تنقید کی گئی ہے۔ ورلڈکپ سے قبل جو تحفظات تھے وہ ختم ہو گئے ہیں۔ آئرلینڈ، سکاٹ لینڈ، افغانستان اور متحدہ عرب امارات کی ٹیموں کو میگا ایونٹ سے قبل کمزور سمجھا جا رہا تھا جو غلط ثابت ہو گیا ہے۔ اس سے ہمیں سکون کا سانس ملا ہے۔ ٹیموں کی کمی کے حوالے سے غور 1992ءکے ورلڈکپ کو دیکھ کر کر رہے ہیں۔ 1992ءکا فارمیٹ تمام 11 میگا ایونٹس میں سے بہترین تھا جب 9 بہترین ٹیمیں ایک دوسرے کے مدمقابل تھیں۔ سابق کپتان سٹیون وا نے بھی ٹیموں کی کمی کے فیصلے پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے چھوٹے ممالک پر برا اثر پڑے گا۔ ایسے ممالک میں کرکٹ کے فروغ کو بھی مدنظر رکھا جائے۔ فٹبال ورلڈکپ میں 32 ٹیمیں شریک ہوتی ہیں۔ کرکٹ کو بھی 8 سے زیادہ ٹیموں کی ضرورت ہے۔