قومی کبڈی ٹیم وطن واپس پہنچ گئی‘ بھارتی انتظامات‘ جانبداری کے پول کھول دیئے

قومی کبڈی ٹیم وطن واپس پہنچ گئی‘ بھارتی انتظامات‘ جانبداری کے پول کھول دیئے


لاہور (سپورٹس رپورٹر) عالمی کپ کبڈی ٹورنامنٹ میں دوسری پوزیشن حاصل کرنے کے بعد پاکستان ٹیم وطن واپس پہنچ گئی۔ پاکستانی ٹیم کے کوچ اور کپتان کی جانب سے بھارت میں ٹورنامنٹ کے لیے کیے جانے والے انتظامات کو غیر تسلی بخش قرار دیا جبکہ صوبائی وزیر قانون نے مستقبل میں پاکستان ٹیم کو اچھی تیاری کے ساتھ ٹورنامنٹ میں شرکت کا مشورہ دیدیا۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان کبڈی ٹیم عالمی کپ ٹورنامنٹ میں دوسری پوزیشن حاصل کرنے کے بعد اتوار کو واہگہ بارڈر کے راستے لاہور پہنچ گئی۔ پاکستان ٹیم کے کوچ وحید جٹ نے اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میزبان ملک کی جانب سے پورے ٹورنامنٹ میں جانبداری کا مظاہرہ کیا گیا تھا پاکستانی کھلاڑیوں کے تین تین مرتبہ ڈوپ ٹیسٹ لیے گئے جبکہ بھارت کے کسی کھلاڑی کا ایک مرتبہ بھی ڈوپ ٹیسٹ نہیں لیا گیا۔ ٹورنامنٹ میں عالمی کپ فیڈریشن کے قواعد و ضوابط کی کھل کھلا خلاف ورزی کی گئی، پاکستان ٹیم مینجمنٹ نے کئی بار ٹورنامنٹ انتظامیہ سے احتجاج بھی کیا لیکن ہماری ایک نہ سنی گئی۔ وحید جٹ کا کہنا تھا کہ ٹورنامنٹ سے قبل تمام ممالک اپنی ٹیم کے کھلاڑیوں کے ناموں کی لسٹ فراہم کرنے کے پابند تھے لیکن بھارت کی جانب سے پورے ٹورنامنٹ میں ایسا نہیں کیا گیا۔ بھارتی ٹیم میں گگن اور ایدم نامی کھلاڑی فائنل کھیل گئے جن کی ٹورنامنٹ میں کسی میچ میں بھی شرکت نہیں تھی۔ اس موقع پر پاکستان ٹیم کے کپتان مشرف جاوید جنجوعہ کا کہنا تھا کہ بھارتی کھلاڑیوں نے قوت بخش ادویات کا استعمال کر رکھا تھا یہی وجہ تھی کہ فائنل میں ان کی قوت پاکستانی کھلاڑیوں سے بہت زیادہ بڑھ گئی تھی کہ انہیں روکنا مشکل تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ جب تک کبڈی کا ورلڈ کپ بھارت میں منعقد ہوتا رہے گا کسی دوسری ٹیم کا ٹائٹل جیتنا مشکل ہے۔ فائنل میچ میں ریفری اور امپائرز دونوں کی جانب سے جانبدارانہ فیصلے دیکھنے کو ملے۔