”سپاٹ فکسنگ کیس“ پاکستان ہی نہیں آئی سی سی کی بھی ناکامی ہے:عامر سہیل

لاہور (حافظ محمد عمران + وقت نیوز) کرکٹ کرپشن قانونی جوا کرانےوالوں اور غیرقانونی جوا مافیا کے درمیان لڑائی ہے۔ یہ ایک بہت بڑی گیم ہے اور ہم اس میں پس رہے ہیں۔ سپاٹ فکسنگ کیس صرف پاکستان نہیں آئی سی سی کی بھی ناکامی ہے۔ انٹرنیشنل کرکٹ کونسل ہر معاملے میں ناکام ہو چکی ہے اور اسکا اینٹی کرپشن یونٹ صرف اور صرف پیسے کا ضیاع ہے۔ ان خیالات کا اظہار قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان عامر سہیل نے وقت نیوز کے پروگرام گیم بیٹ میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ تینوں پاکستانی کھلاڑیوں کی سزا کی وجہ سے ناصرف ہم بدنام ہوئے‘ شرمندگی اٹھانا پڑی بلکہ اس کے ساتھ ساتھ ہم اپنے بہترین ٹیلنٹ سے بھی محروم ہو گئے۔ انہوں نے کہا کہ اب یہ کھلاڑی اس پوزیشن میں تھے کہ پاکستان کو کئی عالمی اعزاز جیت کر دے سکتے تھے۔ عامر سہیل کا کہنا تھا کہ پی سی بی نے اس معاملے کو درست انداز میں ہینڈل نہیں کیا۔ یہی وجہ ہے کہ آج ہم دنیا بھر میں بدنام ہوئے ہیں۔سابق کپتان کا کہنا تھا کہ ہم اس معاملے میں آئی سی سی کو دباﺅ میں لا سکتے تھے۔ الٹا ہم اس کے دباﺅ میں آگئے۔ کرکٹ کی عالمی تنظیم کے اعلیٰ عہدیداروں سے پوچھا جانا چاہئے کہ وہ کیا کرتے ہیں کیوں ہمارے کھلاڑیوں کا نام بار بار میچ فکسنگ میں آرہا ہے جبکہ آئی سی سی انہیں خود ہی کلیئر کر چکی ہے۔ آئی سی سی ڈویلپمنٹ کے نام پر بے وقوف بنا رہی ہے۔ عامر سہیل کا کہنا تھا کہ محکمہ جاتی ٹیموں کے بند ہونے سے ملک میں کھیلوں کو ناقابل تلافی نقصان پہنچتا ہے۔سابق کپتان کا کہنا تھا کہ وہ کرکٹ کی خدمت کےلئے ہر وقت تیار ہیں۔ تاہم اب میرے کچھ تحفظات ہیں۔ جنرل توقیر ضیاءنے انہیں بہت سپورٹ کیا تھا اور ان کی عادتیں بھی خراب کی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ میچ فکسنگ میں دیگر ممالک کے کھلاڑیوں کے بھی نام آئے۔