وزیراعظم غیر قانونی عبوری کمیٹی کا از خود نوٹس لیں : عارف حسن

وزیراعظم غیر قانونی عبوری کمیٹی کا از خود نوٹس لیں : عارف حسن

لاہور (سپورٹس رپورٹر) پاکستان اولمپک ایسوسی ایشن کے صدر لیفٹیننٹ جنرل (ر) عارف حسن نے وزیر اعظم پاکستان سے ایک مرتبہ پھر اپیل کی ہے کہ وہ غیر قانونی عبوری کمیٹی کے معاملات کا از خود نوٹس لیں کیونکہ غیر قانونی عبوری کمیٹی کی وجہ سے پاکستان کی انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی سے رکنیت کی معطلی کے امکانات بڑھ گئے ہیں۔ اگر خدانخواستہ ایسا ہوا تو اس کی تمام ذمہ داری غیر قانونی عبوری کمیٹی اور پاکستان سپورٹس بورڈ پر عائد ہوگی۔ لاہور کے مقامی ہوٹل میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے لیفٹیننٹ جنرل (ر) عارف حسن کا کہنا تھا کہ اسلام آباد میں غیر قانونی عبوری کمیٹی کے زیر اہتمام منعقد ہونے والے الیکشن کی قانونی کوئی حیثیت نہیں ہے جسے نہ تو عدالت تسلیم کرئے گی اور نہ ہی انٹرنیشنل اولمپک کمیٹی۔ غیر قانونی الیکشن میں حصہ لینے والی کھیلوں کی تنظیموں کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ صدر پی او اے سید عارف حسن نے وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف سے اپیل کی کہ وہ معاملے کا از خود نوٹس لیں۔ ان کا کہنا تھا کہ چند مفاد پرست گذشتہ ایک سال سے اس کوشش میں لگے ہوئے ہیں کہ پاکستان کی رکنیت معطل ہو جائے ابھی تک اپنی کوششوں سے پاکستان کو معطلی سے بچاتے چلے آئے ہیں۔ پاکستان اولمپک ایسوسی ایشن کے ساتھ 34 کھیلوں کی تنظیموں کا الحاق ہے جن میں سے تین سے چار غیر قانونی عبوری کمیٹی کے ساتھ ہیں جبکہ باقی تمام کھیلوں کی تنظیموں کا پاکستان اولمپک ایسوسی ایشن کو بھرپور اعتماد حاصل ہے۔ عبوری کمیٹی کے زیر اہتمام اسلام آباد میں منعقد ہونے والی گیمز کی بھی کوئی حیثیت نہیں ہے وہ صرف گیمز ہیں کیونکہ لاہور ہائیکورٹ اس پر فیصلہ دے چکی ہے کہ اسلام آباد کی گیمز کو 32 ویں نیشنل گیمز کا نام نہیں دیا جا سکتا۔ دوسری جانب سپریم کورٹ آف پاکستان نے بھی پاکستان اولمپک ایسوسی ایشن کو ہدایت کی ہے کہ وہ اپنی جنرل کونسل اجلاس بلائے اور الیکشن سے متعلق معاملات کا جائزہ لیکر فیصلہ کرئے لہذا 3 اگست کو لاہور میں جنرل کونسل اجلاس طلب کر لیا گیا ہے جس کے بعد اگلی سماعت میں عدالت کو تفصیلات سے آگاہ کیا جائے گا۔ انہوں نے وزیر کھیل سے مطالبہ کیا کہ وہ اس بات کی انکوائری کرائیں کہ فنڈز کو کس قانون کے تحت جاری کیا گیا ہے۔ لیفٹیننٹ جنرل عارف حسن کا کہنا تھا کہ پاکستان باسکٹ بال فیڈریشن کی منفی سرگرمیوں کی وجہ سے انٹرنیشنل باڈی کی جانب سے ان کی رکنیت معطل کر دی گئی ہے اسی طرح دیگر کھیلوں کی تنظیموں کے لئے بھی یہ ایک سبق ہے کہ اگر انہوں نے اولمپک چارٹر کی خلاف ورزی کی تو ان پر بھی بین الاقوامی کھیلوں کی تنظیموں کی جانب سے پابندی لگ سکتی ہے۔ میری پاکستانی کھیلوں کی تنظیموں سے درخواست ہے کہ وہ ایسی کسی سرگرمی کا حصہ نہ بنیں جن سے ان پر انٹرنیشنل پابندی لگنے کا امکان پیدا ہو۔