قومی کرکٹ ٹیم کا کولمبو پہنچنے پر پرتپاک خیرمقدم : دورہ آسان نہیں‘ اصل ٹارگٹ فتح ہے‘ قوم کو مایوس نہیں کرینگے : مصباح الحق‘ وقار یونس

قومی کرکٹ ٹیم کا کولمبو پہنچنے پر پرتپاک خیرمقدم : دورہ آسان نہیں‘ اصل ٹارگٹ فتح ہے‘ قوم کو مایوس نہیں کرینگے : مصباح الحق‘ وقار یونس

کولمبو/کراچی(نیوز ایجنسیاں+سپورٹس رپورٹر) قومی کرکٹ ٹیم سری لنکا میں 2 ٹیسٹ اور3 ایک روزہ میچوں کی سیریز کھیلنے کیلئے ہفتہ کی رات کولمبو پہنچ گئی ، کولمبو ائرپورٹ پر سری لنکن کرکٹ بورڈ  اور پاکستانی سفارتخانے کے حکام نے پاکستانی ٹیم کا خیر مقدم کیا ، اس موقع پر سکیورٹی کے سخت  انتظامات کیے گئے تھے ، ٹیم کو سخت پہرے میں ہوٹل پہنچایا گیا ، اس سے قبل جب ٹیم کراچی سے کولمبو روانہ ہوئی تو اس کو بڑے تپاک سے رخصت کیا گیا ، ہوٹل سے ائرپورٹ آتے ہوئے ٹیم اور انتظامیہ جلدی میں کپتان مصباح الحق کو ہی پیچھے چھوڑ آئے ۔ تفصیلات کے مطابق قومی کرکٹ ٹیم دورہ سری لنکا کیلئے جب ہوٹل سے ائرپورٹ کیلئے روانہ ہونے لگی تو کھلاڑیوں کو لے جانے والی تین سے چار گاڑیوں میں کھلاڑی بیٹھ گئے لیکن ٹیم انتظامیہ سمیت کھلاڑیوں کو بھی اپنے کپتان کو ساتھ لے جانے کا خیال ہی نہ آیا اور حسب معمول کپتان مصباح الحق سکون و اطمینان کیساتھ کمرے سے نکلے تو معلوم ہوا کہ ائرپورٹ لے جانے والی گاڑیاں تو روانہ ہوچکی ہیں اس کے باوجود انہوں نے کسی بھی جلدبازی کا مظاہرہ نہیں کیا بلکہ اطمینان کیساتھ پارکنگ ایریا کے باہر جاکر ٹیم کو جوائن کیا۔پاکستانی ٹیم سری لنکا کے خلاف پہلا ٹیسٹ 6 اگست کو گال اور دوسرا 14اگست کو کولمبو میں کھیلے گی ، 2 ٹیسٹ میچوں کی سیریز کے بعد ٹیسٹ ٹیم میں شامل خرم منظور ، شان مسعود ، اسد شفیق ، سرفراز احمد ، عبدالرحمن اور راحت علی 19 اگست کو پاکستان واپس آجائیں گے جبکہ ایک روزہ سکواڈ میں شامل ذوالفقار بابر ، شرجیل خان ، محمد حفیظ ، انور علی ، شاہد آفریدی ، فواد عالم اور صہیب مقصود سری لنکا جائیں گے ۔ 3 ایک روزہ میچوں کی سیریز کا پہلا میچ 23 اگست کو ہیمنٹوٹا ، دوسرا 27 اگست کو کولمبو اور تیسرا 30 اگست کو بمبولا میں کھیلا جائے گا ۔ قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق نے کہا ہے کہ  میں کپتانی کرتے ہوئے پرسکون رہتاہوں تو لوگ پریشان ہوتے ہیں یہی میرے لئے بہتر ہے ، ٹیم سری لنکا کے خلاف بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کریگی، سیریز میں دونوں ٹیموں کے درمیان سخت مقابلہ دیکھنے میں آئے گا ،  ہفتہ کو یہاں قومی ٹیم کے ہیڈ کوچ وقاریونس کے ہمراہ پریس کانفرنس  سے خطاب کررہے تھے ۔ مصباح الحق  نے کہا کہ پاکستان اور سری لنکن کھلاڑی ایک دوسرے کی خامیوں اور خوبیوں سے بہت اچھی طرح واقف ہیں اس لئے دونوں ٹیموں کے درمیان مقابلے ہمیشہ ہی سخت ہوتے ہیں۔ سری لنکا کے خلاف گزشتہ سیریز میں قومی ٹیم نے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا۔مصباح الحق کا کہنا تھا کہ وہ ہمیشہ ہی پر سکون رہتے ہیں اور ان کا خیال ہے کہ لوگوں کو اسی وجہ سے پریشانی ہوتی ہے اور یہی ان کے لئے بہتر ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پی سی بی نے انہیں کپتان مقرر کیا ہے، وہ ہمیشہ کے لئے کپتان نہیں بنے، ٹیم کے اگلے قائد کا فیصلہ بھی پی سی بی ہی کرے گی۔اس موقع پروقار یونس کا کہنا تھا کہ بین الاقوامی طور پر کرکٹ کھیلنے والے تمام ممالک کی نظریں  ورلڈ کپ پر ہوتی ہیں، ہمارے لئے بھی اگلے 6 ماہ بہت اہم ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ورلڈ کپ اہم ہے لیکن اس سے پہلے سری لنکا اور آسٹریلیا سے ہونے والی سیریز بھی کم اہمیت کی حامل نہیں۔ مصباح الحق کے جانشین کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ایک کوچ کی حیثیت سے وہ ٹیم کے ہمراہ پہلی مرتبہ سری لنکا روانہ ہورہے ہیں جس کے بعد ہی وہ ٹیم میں شامل کسی بھی کھلاڑی کی اہلیت اور اس کی صلاحیتوں سے متعلق بتا سکتے ہیں۔