کھیلوں کی بحالی کیلئے عملی اقدامات کرنا ہونگے، صرف تجاویز سے مسائل حل نہیں ہوتے: جہانگیر خان

کھیلوں کی بحالی کیلئے عملی اقدامات کرنا ہونگے، صرف تجاویز سے مسائل حل نہیں ہوتے: جہانگیر خان

لاہور (نمائندہ سپورٹس/ سپورٹس رپورٹر) کھیلوں میں ماضی والے مقام پر بحالی کے لئے زبانی جمع خرچ کے بجائے عملی اقدامات کرنا ہوں گے۔ ہم نے بہت وقت باتوں میں ضائع کردیا ہے۔ بیس سال سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہم ابھی تک کوئی ٹھوس پالیسی بنانے اور منصوبہ بندی کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ ن خیالات کا اظہار سابق عالمی چیمپئن جہانگیر خان نے نوائے وقت کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ صدر مملکت ممنون حسین سے ہونیوالی ملاقات حوصلہ افزا تھی۔ انہوں نے کھیل اور کھلاڑیوں کے مسائل کو حل کرنے اور وزیراعظم پاکستان کی ان مسائل کی طرف توجہ دلانے کا وعدہ بھی کیا اور یقین دہانی بھی کروائی۔ میرے خیال میں یہ کافی نہیں ہے۔ صرف ملاقاتوں اور تجاویز سے مسائل حل نہیں ہوسکتے۔ جب تک ہم اپنی اصلاح نہیں کریں گے۔ نیک نیتی اخلاص اور حب الوطنی کے جذبے سے سرشار ہو کر کام نہیں کریں گے کھیلوں دنیا میں دوبارہ بہترین مقام حاصل نہیں کرسکتے۔ کھلاڑیوںکی سرکاری اداروں میں ملازمتوں کو ختم کر کے بہت بڑا ظلم کیا گیا اس فیصلے کے تباہ کن نتائج ہم آج بھی بھگت رہے ہیں۔ دنیا میں کھیلوں کے ذریعے حکمرانی کی جاتی ہے۔۔ ہمیں اصل میں کھیلوں ی اہمیت احساس ہی نہیں ہے۔ 90,80,70کی دہائی اور اس سے پہلے اگر مختلف کھیلوں میں ہمارے پاس عالمی اعزازات تھے تو اسکی بھی کوئی وجہ تھی اور اگر ہم عالمی اعزازات سے محروم ہیں تو اسکی بھی کوئی ٹھوس وجہ یقینا ہے۔ ہمیں کامیابی کے لئے ماہر اور پیشہ ور افراد کو آگے لانا ہوگاا۔ جس کو جوکام آتا ہے۔ اسکو وہی ذمہ داری دینا ہوگی۔ میرٹ پر فیصلے کرنا ہوں گے۔ کھلاڑیوں کے معاشی تفکرات کو دور کرنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر کام کرنے کی ضرورت ۔ صدر مملکت ممنون حسین سے عظیم کھلاڑیوں سے تجاویز تولی ہیں اصل فائدہ عملی اقدامات سے ہوگا۔ پاکستان میں ٹیلنٹ کی کمی نہیں، ٹیلنٹ کو مناسب سہولیات اور اچھا ماحول فراہم کر کے ہم دنیا پر حکمرانی کرسکتے ہیں۔ کھیلوں کے شعبے میں تنزلی ہماری بہت بڑی انتظامی ناکامی ہے۔ناکامی کے اسباب کو تلاش کر کے غلطیوں کا ازالہ کرتے ہوئے مستقبل کے لئے جان توڑ محنت کرنا ہوگی۔