ساہیوال، بہاولپور: دہشت گردوں کے سہولت کار اور القاعدہ کارکن گرفتار

ساہیوال، بہاولپور (نامہ نگاران) سی ٹی ڈی پاکپتن کے ڈسٹرکٹ افسر فدا حسین شہید کے قتل اور ریجنل سی ٹی ڈی آفیسر اقبال جوئیہ پر قاتلانہ حملے کے مقدمہ میں دہشت گردوں کے سہولت کار ملک فہیم جھکڑ کو گرفتار کر لیا ۔ ڈیوٹی جج انسداد ہشت گردی کورٹ ساہیوال نے گرفتار ملک فہیم جھکڑ کو 5اگست تک جسمانی ریمانڈ دیکر سی ٹی ڈی کے سپرد کر دیا ۔5مارچ کو سی ٹی ڈی پاکپتن کے ڈسٹرکٹ افسر فدا حسین، رینج افیسر اقبال جوئیہ کی سربراہی میں سی ٹی ڈی، پولیس کی ٹیم نے گڑھ پیر صلاح الدین کے مزار کے قریب دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کیا۔دہشت گردوں نے سی ٹی ڈی کی ٹیم پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجہ میں فدا حسین شہید ہوگیا۔ رینج افسر اقبال جوئیہ ، ڈی ایس پی اور کار پورل آفیسر محمد رمضان شدید زخمی ہوگئے تھے، زخمیوں کو سول ہسپتال ساہیوال داخل کرا دیا گیا تھا۔ سی ٹی ڈی اور تھانہ ہڑپہ پولیس اور تھانہ گڑھ پولیس نے دہشت گردوں کا تعاقب جاری رکھا اور ہڑپہ بڈھ بیلہ چراہ گاہ میں مقابلہ کے دوران دو دہشت گرد مارے گئے جن کی شناخت ذیشان شانی اور مرزا عثمان کے نام سے ہوئی تھی۔ دہشت گردوں کے قبضہ سے بھاری مقدار میں دھماکہ خیز مواد بھی برآمد ہوا تھا۔دوران تفتیش انکشاف ہوا تھا کہ بڈھ بیلہ چراگاہ میں ٹھکیدار ملک فہیم جھکڑ نے ڈیرہ بنا رکھا تھا جو القاعدہ کے دہشت گردوں کی پناہ گاہ تھی۔ ضلع ساہیوال اور ضلع فیصل آباد میں مخصوص ٹھکانوں پر دہشت گردی کے منصوبوں پر عملدرآمد کرنا تھا۔ سی ٹی ڈی نے آپریشن کیا جس کے بعد القاعدہ کے ارکان اور ٹھکیدار ملک فہیم جھکڑ روپوش ہو گئے تھے جسے ساہیوال سی ٹی ڈی نے فیصل آباد سے گرفتار کر لیا ۔ بہاولپور میں گزشتہ روز سی ٹی ڈی کو اطلاع ملی تھی کہ دہشت گرد شہر میں تخریبی کارروائی کرنا چاہتے ہیں جس پر اڈا جھانگی والا روڈ پر چھاپہ مار کر القاعدہ سے تعلق رکھنے والے دہشت گرد امین کو گرفتار کرکے اسکے قبضے سے ایک جیکٹ، سیفٹی پن، بال بیرنگ، دو کلو بارودی مواد، چار ڈیٹونیٹرز اور الیکٹرک سوئچ برآمد کرکے تفتیش کیلئے نامعلوم مقام پر منتقل کردیا گیا۔ ذرائع کے مطابق اسکے خلاف مقدمہ بھی درج کرلیا گیا ہے۔
دہشت گرد گرفتار