مسئلہ کشمیر التوا میں ڈالنے سے پورا خطہ تباہی سے دوچار ہو سکتا ہے : میر واعظ

سرینگر(آئی اےن پی) حریت کانفرنس(ع) کے چیرمین میرواعظ عمر فاروق نے بھارت اور پاکستان کے درمیان کشیدگی میں اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ جنگ و جدل اور مسئلہ کشمیر کو التوا ءمیں ڈالنے سے پورا بر صغیر تباہی اور بربادی کے خطرات سے دوچار ہوسکتا ہے۔ پاکستان اور بھارت محاذ آرائی اور ایک دوسرے پر الزام تراشی کے بجائے افہام و تفہیم کا راستہ اپنائیں۔ جب تک دونوں ممالک خلوص اور نیک نیتی کے ساتھ متنازعہ مسائل خاص طورپر مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے سنجیدگی اور جرات کا مظاہرہ نہیں کریں گے تب تک خطے میں جنگ و جدل کے بادل چھائے رہیں گے اور امن و سلامتی اور سیاسی استحکام کا قیام ممکن نہیںہوگا ۔ گزشتہ روزعوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے میرواعظ عمر فاروق نے جوہری اسلحہ سے لیس دونوںپڑوسی ممالک بھارت اور پاکستان کے درمیان ایک بار پھر بڑھتی ہوئی کشید گی ،مخاصمت اور تناو پر گہری فکرو تشویش کا اظہار کیا۔حریت چیرمین نے مسئلہ کشمیر کو التوا میں ڈالے رکھنے کی حکومت ہند کی روایتی پالیسی پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ” مسئلہ کشمیر کی نزاکت اور سنگینی کے پیش نظر اگر فوری طور پر اسے حل کرنے کیلئے مناسب اور موزوں اقدامات نہیں اٹھائے گئے تو اس سے نہ صرف برصغیر بلکہ پورے خطے کی امن و سلامتی مزید خطرہ سے دوچار ہوسکتی ہے“۔
شہدائے گاوکدل کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے میرواعظ نے کہا کہ ”ہمارے لاتعداد شہیدوں نے ملت کی سربلندی اور وطن کی آزادی کیلئے اپنا عظیم فریضہ ادا کرکے بحیثیت مجموعی ہم سب پر بھاری ذمہ داریاں ڈال دی ہیں اور ان شہیدوں کی قربانیوں کا تحفظ اور رواں جدوجہد آزادی کو اسکے منطقی انجام تک پہنچانا ہماری اجتماعی ، ملی اور تحریکی ذمہ داری ہے“۔انہوںنے جموںوکشمیر کی حدود میں روز افزوں بنیادی انسانی حقوق کی پامالیوں کے بڑھتے ہوئے گراف خاص طور پر بھارت کے یوم جمہوریہ کی آمد سے قبل پوری وادی میںفورسز کے تازہ عوام کش حربوں ، جبر و قہر اور نہتے لوگوں کو تختہ مشق بنانے کی کارروائیوں کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔