دھند میں حادثات سے 6 افراد جاں بحق‘ لوڈشیڈنگ پر لوگ سراپا احتجاج‘ کئی شہروں میں ہڑتال

لاہور (سٹاف رپورٹر/ نیوز رپورٹر/ ایجنسیاں) شدید دھند کا سلسلہ گذشتہ روز بھی جاری رہا جس کے باعث کاروبار زندگی معطل ہوکر رہ گیا‘ دھند کے دوران ٹریفک کے مختلف حادثات میں 6افراد جاں بحق اور کئی زخمی ہو گئے۔ حادثات سے ہلاکتیں شیخوپورہ‘ جہانیاں اور خانپور میں ہوئیں‘ دھند سے پروازوں اور ٹرینوں کا شیڈول بھی متاثر رہا اور وہ گھنٹوں لیٹ رہیں۔ نارنگ منڈی میں شدید سردی کے باعث بچے سمیت 3افراد دم توڑ گئے جبکہ بجلی اور گیس کی بدترین لوڈشیڈنگ بھی جاری رہی جس پر لوگ سراپا احتجاج بن گئے‘ بجلی کی بندش سے کاروبار شدید متاثر رہا۔ ڈسٹری بیوشن کمپنیاں 8گھنٹے کی بجائے 19گھنٹے لوڈشیڈنگ کر رہی ہیں‘ بجلی کے نظام میں 3780میگاواٹ قلت ہے۔ لاہور زون کے اضلاع میں سی این جی سٹیشنوں پر گیس 2روز کیلئے بند کر دی گئی جبکہ جنوبی پنجاب میں مرکزی انجمن تاجران کی اپیل پر جنوبی پنجاب میں تاجروں نے بجلی‘ گیس کی لوڈشیڈنگ‘ قیمتوں میں اضافے اور مہنگائی کیخلاف ہڑتال کی اور احتجاجی ریلیاں نکالیں۔ بورے والا‘ ملتان‘ وہاڑی‘ بہاولپور سمیت کئی شہروں میں دکانیں اور تجارتی مراکز بند رہے جبکہ اس دوران احتجاجی مظاہرے بھی کئے گئے اور بعض مقامات پر احتجاج کے دوران سڑکیں بھی بلاک کی گئیں اور حکومت کیخلاف شدید نعرے بازی کی گئی۔ نارنگ منڈی سے نامہ نگار کے مطابق سردی کے باعث ظفر سٹریٹ میں سہیل زرگر کا کمسن بیٹا طلحہ جبکہ محمد اسلم اور اللہ رکھا دم توڑ گئے۔ شیخوپورہ میں مختلف مقامات پر ٹریفک حادثات کے دوران ایک نوجوان جاں بحق اور درجنوں زخمی ہوئے۔ علاوہ ازیں ملک بھر میں چلنے والی ریل گاڑیاں دھند کی وجہ سے کئی گھنٹوں کی تاخیر سے اپنی اپنی منزل کی جانب روانہ ہوئیں اور پہنچیں۔ لاہور سے کراچی جانے والی خیبر میل، علامہ اقبال ایکسپریس دو گھنٹے، عوام ایکسپریس، تیزرو ڈیڑھ گھنٹے اور کوئٹہ جانے والی کوئٹہ ایکسپریس ایک گھنٹہ کی تاخیر سے روانہ ہوئیں۔ ملتان، کراچی اور پشاور سے آنے والی عوام ایکسپریس ایک گھنٹہ، موسیٰ پاک پون گھنٹہ قراقرم ایکسپریس، تیزگام اور شالیمار ایکسپریس دو گھنٹوں کی تاخیر سے پہنچیں۔ علاوہ ازیں سوئی ناردرن کے سسٹم پر 500ملین کیوبک فٹ گیس کی قلت برقرار رہنے کے باعث لاہور، ملتان اور فیصل آباد کے 700سے زائد صنعتی یونٹس سمیت ملتان، ایبٹ آباد ، فیصل آباد اور پشاور کے سینکڑوں سی این جی سٹیشنز کو سپلائی معطل اور رہائشی علاقوں میں بھی گیس کی طویل لوڈشیڈنگ جاری رہی جس پر لاہورکے علاقے چاہ میراں اور مصری شاہ میں عوامی ایکشن کمیٹی کی طرف سے بجلی و گیس کی قیمتوں میں اضافہ و لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاجی مظاہروں سمیت خانیوال ، نوشہرہ ورکاں ، بورے والا اور دیگر شہروں میں احتجاجی مظاہرے ، جلوس اور ریلیاں نکالی گئی۔ سوئی ناردرن کے لوڈ مینجمنٹ پروگرام کے مطابق آج ملتان، فیصل آباد ، ایبٹ آباد اور پشاور کے سی این جی سٹیشنز کو گیس کی سپلائی بحال کر کے اگلے مرحلہ میں لاہور کے سی این جی اسٹیشنوں کو گیس کی فراہمی آئندہ 2روز کے لئے بند کر دی جائے گی۔لاہور میں روزانہ کی بنیاد پر ہر علاقے کے دو‘ دو فیڈر بیک وقت بند کر دئیے جاتے ہیں۔ نارنگ منڈی میں بدترین لوڈشیڈنگ کیخلاف پریس کلب کے سامنے شہریوں نے احتجاج کیا۔ شیخوپورہ سے نامہ نگار خصوصی کے مطابق شہر میں گیس پریشر میں شدید کمی رہی اور لوگ لکڑیاں جلانے پر مجبور ہو گئے۔ اے پی پی کے مطابق محکمہ موسمیات نے کہا ہے کہ چند روز میں درجہ حرارت میں اضافہ کے باعث دھند اور سردی کی شدت میں کمی واقع ہو گئی۔ علاوہ ازیں محکمہ سوئی گیس کی جانب سے گیس کی بندش کی وجہ سے لاہور کے تمام سی این جی سٹیشن آج سے 2روز تک بند رہیں گے‘ لوڈ مینجمنٹ کی وجہ سے سی این جی سٹیشنوں کو گیس کی سپلائی ہفتہ 23جنوری صبح 6بجے تک بند رہے گی۔ لاہور زون میں شامل اوکاڑہ‘ ساہیوال‘ قصور‘ پاکپتن اور شیخوپورہ کے اضلاع میں بھی سی این جی سٹیشنوں پر گیس 2روز کیلئے بند رہے گی۔