تھر: مزید 6 بچے جاں بحق، متاثرین کو 2 ماہ سے گندم نہ مل سکی

مٹھی (صباح نےوز) تھر میں غذائی قلت اور بنیادی صحت کی سہولیات کی کمی کے باعث 6 بچے جاں بحق ہو گئے۔ ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر مٹھی کے سول ہسپتال میں 9 ماہ کا پرکاش، ڈیپلو کے گاو¿ں کمالو میں 8 دن کی کوثر، اشرف حالو کا نومولود بچہ اور چھاچھرو کے تحصیل ہسپتال میں زیر علاج 6 ماہ کی لیلیٰ کو قحط نے نگل لیا۔گزشتہ 10 روز میں39 بچوں سمیت 42 افراد بھوک، افلاس اور حکومتی غفلت کی بھینٹ چڑھ گئے۔ اس کے علاوہ سول ہسپتال مٹھی میں زیرعلاج 40 بچوں میں سے 5 کی حالت تشویش ناک ہے جبکہ دو بچوں کو حیدرآباد بھجوایا گیا ہے۔ دوسری جانب تھر کے غریب باسیوں میں گندم کی پانچویں قسط دو ماہ گزر جانے کے باوجود بھی مکمل طور پر تقسیم نہیں کی جا سکی۔ سردی کی شدت میں اضافے کے باوجود متاثرین کو اب تک امدادی کھجوریں بھی مہیا نہیں کی گئیں۔غذائی قلت سے مٹھی کے ہسپتال میں ایک اور بچہ دم توڑ گیا جس سے گذشتہ روز جاں بحق بچوں کی تعداد 6 ہو گئی۔
 
تھر/ 6 جاں بحق