کراچی میں چوبیس گھنٹوں کے دوران تشدد کے مختلف واقعات میں خاتون سمیت نو افرادکو ہلاک کردیا گیا۔

کراچی میں دہشت گردی کا سلسلہ جاری ہے۔اتواراور پیر کی درمیانی شب نارتھ ناظم آباد کٹی پہاڑی کے نزدیک کالعدم جماعت کے دو کارکنان کی لاشیں برآمد ہوئیں جبکہ بلدیہ ٹاون میں دو نوجوانوں کو اغوا کے بعد قتل کردیا گیا جو پاک کالونی کے علاقے جہان آباد کے رہائشی تھے ۔ادھر کھارادر کے علاقے باکڑا ہوٹل کے نزدیک چلتی گاڑی سے نامعلوم افراد ایک نوجوان کی لاش پھینک کر فرار ہوگئے جس کی تاحال شناخت نہیں ہوسکی ہے جبکہ چاکیواڑہ کے علاقے سے بھی ایک خاتون کی تشدد زدہ لاش ملی ہے۔ اورنگی ٹاؤن میں بھی دہشتگردوں نے فائرنگ کرکے ایک شخص کو قتل کردیا۔ لیاری کے علاقے چاکیواڑہ میں نامعلوم افراد کی فائرنگ کے نتیجے میں دو افراد جاں بحق ہوگئے۔ دوسری جانب آئی جی سندھ واجد درانی نے شہر میں امن و امان قٓائم کرنے میں ناکامی پر سات ایس پی اوز اور سات ایس ایچ اوز کو معطل کردیا۔ معطل ہونے والوں میں ایس پی او محمود آباد ، ایس پی او جمشید ٹاؤن ، ایس پی او صدر ، ایس پی او گارڈن ، ایس پی او گڈاپ ، ایس پی او گلبرگ شامل ہیں جبکہ انہی علاقوں کے سات ایس ایچ اوز کو بھی معطل کیا گیا۔