تصورات اور تہذیب و تمدن

ایڈیٹر  |  قائداعظم نے فرمایا

 خدا کے فضل و کرم سے پاکستان، جس کےلئے ہم جدوجہد کرتے رہے ہیں، آج ایک حقیقت بن چکا ہے لیکن ایک ملک کی تخلیق، ایک مقصد حاصل کرنے کا ذریعہ تھی، بذات خود مقصد نہ تھا، اس کے پیچھے یہ خیال کارفرما تھا کہ ہمیں ایک ایسا ملک ملے جہاں ہم آزادی سے سانس لے سکیں، اس کی تشکیل و تعمیر اپنے تصورات اور تہذیب و تمدن کے مطابق کر سکیں اور جہاں اسلامی سماجی انصاف اور غیر جانبداری کے اصولوں کا بول بالا ہو۔ (پاکستانی سرکاری اور فوجی افسروں سے خطاب، کراچی، 11اکتوبر 1947ئ)