پاکستان مسلم لیگ نون کے قائد میاں نواز شریف نے کہا ہے کہ مفاہمت کا راستہ اب بھی موجود ہے، صدر زرداری جج بحال کر دیں تو ان کے راستے میں نہیں آؤں گا۔

پاکستان مسلم لیگ نون کے قائد میاں نواز شریف نے کہا ہے کہ مفاہمت کا راستہ اب بھی موجود ہے، صدر زرداری جج بحال کر دیں تو ان کے راستے میں نہیں آؤں گا۔

برطانوی ریڈیو کوایک انٹرویو میں نواز شریف نے اس بات سے انکار کیا کہ انہوں نے پنجاب میں گورنر راج کے نفاذ کے بعد سول نافرمانی کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سول نافرمانی کا اعلان میں نے کیا نہ کوئی ابھی اس کا فیصلہ ہوا۔ میں تو صرف یہ کہہ رہا ہوں کہ انتظامیہ پولیس کو غیر قانونی حکم نہیں ماننا چاہئیں۔ قائداعظم محمد علی جناح نے بھی انتظامیہ اور پولیس سے کہا تھا کہ غیر قانونی اور غیر آئینی احکامات نہ مانیں۔ وزیراعظم سے رابطے کا کوئی دروازہ بند نہیں ہوا۔ دریں اثنا نجی ٹی وی سے خصوصی انٹرویو میں نواز شریف نے کہا کہ جج این آر او کے باعث بحال نہیں ہو رہے۔ آنے والے دنوں میں ملک میں جو صورتحال پیدا ہو رہی ہے اس سے جمہوری انقلاب آ سکتا ہے اور اسے ضرور آنا چاہیے تاکہ عوام کے مسائل حل ہوں۔ زرداری بے نظیر بھٹو کے وارث بنیں مشرف کے نہیں۔ حکومت ذمہ داری کا ثبوت دے تو تیسری قوت برسراقتدار نہیں آ سکتی۔ صدر زرداری ملک کو مڈ ٹرم الیکشن کی جانب لے جا رہے ہیں۔