صوبائی وزیرقانون رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت کے زیراستعمال بیلٹ پروف گاڑیوں کی تعداد گیارہ ہے

صوبائی وزیرقانون رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ پنجاب حکومت کے زیراستعمال بیلٹ پروف گاڑیوں کی تعداد گیارہ ہے

رانا ثناء اللہ نے یہ باتیں صوبائی اسمبلی کے کیفے ٹیریا میں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت میں کہیں۔ گورنر سلمان تاثیر کی جانب سے شریف برادران پر بیلٹ پروف گاڑیوں کے استعمال کے الزامات کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت کے پاس موجود بیلٹ پروف گاڑیوں میں سے دو وزیراعلیٰ، دو گورنر، ایک سنئیر وزیر، ایک سپریم کورٹ اور ایک ہائی کورٹ کے زیراستعمال ہے، ایک گاڑی پنجاب حکومت کی جانب سے وزیراعلیٰ خیبر پختون خواہ کو تحفہ میں دی گئی جبکہ باقی چار گاڑیاں صدر، وزیراعظم، دیگر وزرائے اعلیٰ اور غیرملکی اعلیٰ شخصیات کے دورے کے دوران استعمال ہوتی ہیں۔
صوبائی وزیر قانون نے گورنر کے اس بیان کی بھی سختی سے تردید کی کہ صوبے میں لاہور سمیت مختلف اضلاع میں سات مقامات کو وزیراعلی ہائوس قرار دے کر ان کی دیکھ بھال کیلئے کروڑوں روپے خرچ کئے جارہے ہیں، ان کا کہنا تھا صرف وزیراعلیٰ کی رہائش گاہ اور سات کلب روڈ کو وزیراعلیٰ ہائوس کا درجہ دیا گیا ہے۔ رانا ثناء اللہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایلیٹ فورس سے کسی قسم کی پروٹوکول ڈیوٹی نہیں کرائی جارہی۔    
گورنرکی جانب سے صوبائی حکومت کی معاشی کارکردگی پر ہونے والی تنقید کو مسترد کرتے ہوئے رانا ثناءاللہ کا کہنا تھا کہ حکومت رواں مالی سال کیلئے مقرر کردہ اہداف حاصل کر چکی ہے اور سستی روٹی سکیم پر بے مقصد اعتراض کیا گیا ہے۔