وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے امریکی ہم منصب ہیلری کلنٹن سے ملاقات کی ہے جس میں پاکستان اور افغانستان کے حوالے سے امریکہ کی نئی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے امریکی ہم منصب ہیلری کلنٹن سے ملاقات کی ہے جس میں پاکستان اور افغانستان کے حوالے سے امریکہ کی نئی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کے درمیان واشنگٹن میں ہونے والی ملاقات میں دہشت گردی کے خلاف جنگ، سوات امن معاہدے اور پاکستان میں امن وامان کی صورتحال پربات چیت کی گئی۔ ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کر تے ہوئے ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ پاکستانی ہم منصب سے ملاقات میں اسٹریٹیجک تعلقات پر بات چیت ہوئی۔ انہوں نے یقین دہانی کرائی کہ پاک افغان پالیسی کی تشکیل نو سے متعلق پاکستانی تجاویز پر غور کیا جائے گا۔ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان کو نئی امریکی انتظامیہ سے بہت سی امیدیں وابستہ ہیں اور پاکستان اور امریکا دہشت گردی کے خلاف پرعزم ہیں۔ اس سے پہلے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنے افغان ہم منصب رنگین داد فرسپانتا سے بھی ملاقات کی۔ اس موقع پران کا کہنا تھا کہ عالمی برادری کو سوات امن معاہدے پرفکرمند نہیں ہونا چاہئے، یہ ایک مقامی مسئلے کا مقامی حل ہے جس کا مقصد فوری انصاف کی فراہمی ہے۔ انہوں نے اس تاثر کوغلط قراردیا کہ پاکستان نے طالبان کو خوش کرنے کی کوشش کی ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ دہشت گردی کو شکست دینے کے لئے پاکستان کا عزم اب بھی وہی ہے جو پہلے تھا۔ واضح رہے کہ وزیرخارجہ ان دنوں واشنگٹن میں ہیں جہاں وہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں نئی حکمت عملی پرغورکے لئے سہ فریقی سیشن میں شرکت کررہے ہیں۔