کشمیر کسی کے باپ کی جاگیر نہیں‘ بھارتی وزیر دفاع کا بیان ہمالیہ جتنا بڑا جھوٹ ہے : علی گیلانی‘ میر واعظ

خبریں ماخذ  |  کامرس رپورٹر
کشمیر کسی کے باپ کی جاگیر نہیں‘ بھارتی وزیر دفاع کا بیان ہمالیہ جتنا بڑا جھوٹ ہے : علی گیلانی‘ میر واعظ

سرینگر(آ ئی اےن پی ) حریت کانفرنس (گ) کے چیئرمین سید علی گیلانی نے بھارتی وزیر دفاع کے بیان کو مسترد کرتے ہوئے کہاہے کہ جموں کشمیر آرپار ایک متنازعہ خطہ ہے اور اس کو بھارت کا اٹوٹ انگ قرار دینا ہمالیہ جتنا بڑا جھوٹ ہے، جس کا حقیقت کے ساتھ دور کا بھی تعلق نہیں ہے۔ بھارتی حکمرانوں کو مظلوم کشمیریوں کے خون کا چسکہ لگا ہوا ہے اور اسی لئے وہ کشمیر کے حوالے سے حقائق کو قبول کرنے کے بجائے ہٹ دھرمی پر قائم رہ کر یہاں مزید انسانی زندگیوں کو گ±ل کرانے کی پالیسی پر گامزن ہیں“۔ گزشتہ روز جاری بےان مےں انتھونی کے پارلیمنٹ میں دےئے گئے بیان کو یکسر مسترد کرتے ہوئے بزرگ رہنما نے کہا ” کشمیر کسی کے باپ کی جاگیر نہیں ہے، یہ ڈیڑھ کروڑ زندہ انسانوں کا وطن ہے، جنہیں پچھلے65سال سے زبردستی غلام بنالیا گیا ہے اور جب سے اب تک ان کا خون پانی کی طرح بہایا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارت اور پاکستان کے مابین طے پاجانے والے ان تمام معاہدوں اور اقوامِ متحدہ کی قراردادوں کی نفی ہوجاتی ہے، جن کے مطابق جموں کشمیر ابھی تک کسی ملک کا جائز حصہ قرار نہیں پایا ہے اور کشمیریوں نے ابھی اپنے مستقبل کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔ میرواعظ عمر فاروق نے خبردار کیا کہ بھارتی حکمرانوں کے کشمیر سے متعلق حقائق ، تاریخ اور بین الاقوامی وعدوںکے برعکس بیانات سے نہ صرف پاکستان بھارت تعلقات میں کشیدگی اور بدگمانی بڑھ سکتی ہے بلکہ جاری مذاکراتی عمل بھی متاثر ہو سکتا ہے، جموںوکشمیر کی 14 اگست 1947 کی جو حیثیت اور پوزیشن تھی ،وہ تمام علاقہ متنازعہ ہے جس کا فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے اور اسے منصفانہ بنیادوں پر حل کئے بغیر نہ تو خطے میں امن و سلامتی کا قیام ممکن ہے اور نہ ہی دونوں ہمسایہ ملکوں میں خوشگوار تعلقات استوار ہو سکتے ہیں۔