سپریم کورٹ این آراو نظرثانی کیس کی سماعت اٹھارہ اپریل تک ملتوی، ایڈیشنل اٹارنی جنرل کے کے آغا کوکیس کی پیروی کے لئے وزیراعظم سے ہدایات لینے کا حکم ۔

سپریم کورٹ این آراو نظرثانی کیس کی سماعت اٹھارہ اپریل تک ملتوی، ایڈیشنل اٹارنی جنرل کے کے آغا کوکیس کی پیروی کے لئے وزیراعظم سے ہدایات لینے کا حکم ۔

چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے فل کورٹ بینچ نے این آر او نظر ثانی کیس کی سماعت کی ۔سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ عدالت میرٹ پراس کیس کا فیصلہ کرنا چاہتی ہےاور اسی لئے لچک کا مظاہرہ کیا جارہا ہے،ایڈیشنل کے کے آغا اپنی معاونت کے لیے کسی بھی وکیل کی خدمات حاصل کر سکتے ہیں لیکن فیڈریشن کے نمائندہ وکیل کی حثیت سے انہیں بذات خود دلائل دینا ہونگے ۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا کہ عدالت میں پیشی سے روکنے کے لئے وفاق کے وکیل کمال اظفر کو ابوبکر زرداری نامی وکیل کی جانب سے دھمکیاں دی گئی ہیں ۔عدالت نے آئی جی اسلام آباد کو حکم دیا کہ وہ تین دن کے اندر اس واقعہ کی تحقیقات مکمل کر کے عدالت کو آگاہ کریں۔ جسٹس سائر علی نے آبزرویشن دی کہ ایسا لگتا ہے کہ وفاق نے وکیل کی تبدیلی کے لیے کمال اظفر کو دھمکیاں دلوائی ہیںتاہم اس سے ٹیلی فون پر دھمکیاں دے کر وکیل تبدیل کرنے کی روایت پڑ سکتی ہے۔عدالت نے کیس کی مزید سماعت اٹھارہ اپریل تک ملتوی کر دی ہے