دوہری شہریت بل پاکستان کی سالمیت کے لیے مسائل پیدا کردے گا۔ بابر اعوان

دوہری شہریت بل پاکستان کی سالمیت کے لیے مسائل پیدا کردے گا۔ بابر اعوان

پیپلزپارٹی کو دوہری شہریت بل کے حوالے سے اپنے ہی لوگوں کی تنقید کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ سینیٹر رضاربانی اور اعتزاز احسن کے بعد اب بابر اعوان بھی میدان میں آگئے ہیں۔سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےسابق وفاقی وزیر قانون نے کہا کہ انیس سو تہتر کے آئین میں دوہری شہریت پر پابندی عائد کی گئی ہے یہ بل آئین کے خلاف ہے۔ان کا کہنا تھا کہ یہ بل ملکی سلامتی کے خلاف ہوگا پاکستان میں اس وقت ساٹھ لاکھ افغان اور پانچ لاکھ برمی مہاجرین ہیں۔ اس بل کی منظوری کے بعد افغانیوں اور برمیوں کو بھی پارلیمنٹ کا رکن بننے کی اجازت دینا ہوگی جبکہ غیرملکی افراد پاکستان کے پالیسی ساز اداروں میں شامل ہوجائیں گے۔ انہوں نے توہین عدالت ترمیمی بل کو بھی آئین سے متصادم قرار دیا۔ بابر اعوان نے کہا کہ توہین عدالت بل نااہلی اور تضادات کا مجموعہ ہے۔ان کا ماننا تھا کہ توہین عدالت بل پارلیمنٹ سے پاس ہوسکتا ہے مگر جوڈیشل اسکروٹنی سے نہیں۔