مفاہمت کے نام پرمزید بلیک میل نہیں ہو سکتے، موجودہ حالات میں پیپلز پارٹی کے ساتھ مزید نہیں چلا جا سکتا ۔ رضا ہارون

مفاہمت کے نام پرمزید بلیک میل نہیں ہو سکتے، موجودہ حالات میں پیپلز پارٹی کے ساتھ مزید نہیں چلا جا سکتا ۔  رضا ہارون

صوبائی وزیر داخلہ ذوالفقار مرزا کے بیان کے بعد پیپلز پارٹی اور ایم کیو ایم کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوگیا ہے جس کے بعد ایم کیو ایم کے ارکان اسمبلی نے سندھ اسمبلی کے اجلاس کا بائیکاٹ کیا۔ کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے رہنما رضا ہاورن کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم موجودہ حالات میں پیپلزپارٹی کے ساتھ نہیں چل سکتی اس موقع پرانہوں نے سینیٹ، قومی اسمبلی کے اجلاسوں کے بائیکاٹ کا بھی اعلان کیا ۔ ان کا کہنا تھا کہ بھتے کے نام پر پرچیاں بانٹنے والوں کی سرپرستی صوبائی وزیر ذوالفقار مرزا کررہے ہیں جبکہ ایم کیو ایم دہشتگردوں کے خلاف ہے ۔ انہوں نے سخت الفاظ میں کہا کہ دہشتگردوں کے ساتھ نہیں چلا جا سکتا اور مفاہمت کے نام پرمزید بلیک میل نہیں ہونگے۔رضا ہارون کا کا کہنا تھا کہ ذوالفقارمرزا نے دہشتگردوں کے ٹولے کو ذیلی تنظیم کہا ، ان جیسے لوگوں کو پیپلزپارٹی سے نہ نکالا گیا تو راستے جدا ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ پیپلز امن کمیٹی ایک دہشتگرد تنظیم ہے ۔ کراچی میں اغواء برائے تاوان کی وارداتوں کے ذمہ داروں کو جانتے ہیں رضا ہارون نے بتایا کہ حکومت کی جانب سے یقین دہانیوں کے باوجود کسی قسم کے عملی اقدام نہیں اٹھائے گئے۔ ایک سوال کے جواب میں ایم کیو ایم کے رہنما کا کہنا تھا کہ ہمارا معاملہ ذوالفقارمرزا نہیں، دہشگردوں کا خاتمہ ہے ۔