الیکشن کمیشن نے کاغذات نامزدگی میں دوہری شہریت کا خانہ شامل کرنے کا فیصلہ کرلیا، دو ملکوں کے شہری آئندہ الیکشن میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

الیکشن کمیشن نے کاغذات نامزدگی میں دوہری شہریت کا خانہ شامل کرنے کا فیصلہ کرلیا، دو ملکوں کے شہری آئندہ الیکشن میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

اسلام آباد میں نیوزکانفرنس کرتے ہوئے سیکرٹری الیکشن کمیشن اشتیاق احمد نے بتایا کہ آئین کے آرٹیکل تریسٹھ ایک سی کے تحت دوہری شہریت کے حامل افراد کے الیکشن میں حصہ لینے پرپابندی ہے لیکن اس قانون پر عمل درآمد نہیں کیا جاسکا۔ ضمنی انتخابات کا مرحلہ آئین کے مطابق ساٹھ روز میں مکمل کرانا ضروری ہے اس لئے آئین کی کوئی خلاف ورزی نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ دو ہزار سات تک انتخابی فہرستوں میں آٹھ کروڑ دس لاکھ ووٹرزشامل تھے، ان میں سے تین کروڑ سترلاکھ ووٹرزکی تصدیق نادرا کے ریکارڈ سے نہیں ہوسکی، اس لئے انتخابی فہرستوں سے ان ووٹرزکا نام خارج کردیا گیا ہے جبکہ تین کروڑ ساٹھ لاکھ نئے ناموں کا اندراج کیا گیا ہے۔
سیکرٹری الیکشن کمیشن کا کہنا تھا کہ اٹھارہ جولائی سے ووٹر لسٹوں میں ڈالے گئے نئے ناموں کی تصدیق گھرگھر جا کرکی جائے گی جبکہ نئی انتخابی فہرستوں کی تیاری کا کام دسمبر تک مکمل کرلیا جائے گا۔ اشتیاق احمد خان نے بتایا کہ ہرشہری اپنے ووٹ کے بارے میں معلومات حاصل کرسکتا ہے، نئی ووٹرلسٹیں بننے تک پرانی لسٹیں کارآمد رہیں گی۔ اس موقع پرڈپٹی چیئرمین نادرا طارق ملک کا کہنا تھا کہ گزشتہ تین برسوں میں تین کروڑ نئے شناختی کارڈ بنائے گئے جو ایک ریکارڈ ہے۔