ایف آئی اے میں ڈیپوٹیشن پر آنیوالے افسروں کے بیرون ملک اثاثوں کا انکشاف

اسلام آباد (سجاد ترین/ خبر نگار خصوصی) ایف آئی اے کے افسران‘ ملازمین کے علاوہ پیپلز پارٹی کی حکومت کے دوران ایف آئی اے میں ڈیپوٹیشن پر آ کر کام کرنے والے سرکاری ملازمین کے اندرون ملک‘ بیرون ملک اثاثوں بارے وسیع پیمانے پر تحقیقات شروع ہو گئی ہیں۔ ابتدائی تحقیقات کے مطابق اسلام آباد‘ لاہور‘ کراچی سمیت مختلف شہروں کے اہم علاقوں‘ ریاستی سکیموں میں بنگلے‘ فارم ہا¶سز‘ کمرشل پلازوں کے علاوہ دوبئی‘ لندن‘ امریکہ اور یورپ کے اہم ممالک میں ایف آئی اے کے افسران کے اثاثے موجود ہیں۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ پی پی حکومت کے دوران ایک انکم ٹیکس گروپ کے افسر پہلے سی ڈی اے میں بھی تعینات رہے ہیں۔ بعد میں ایف آئی اے میں ڈیپوٹیشن پر کام کرتے ہیں ان کے بنک اکا¶نٹس اور بہت زیادہ اثاثوں کا انکشاف ہوا ہے جبکہ ایک پولیس گروپ کے افسر جو ایف آئی اے میں ڈیپوٹیشن پر اپنی خدمات سرانجام دیتے رہے ہیں ان کے پاس اسلام آباد میں کروڑوں روپے کی پراپرٹی کے علاوہ ایک بیوٹی پارلر کی چین کے بھی مالک ہیں اور دوبئی‘ لندن سمیت یورپ کے اہم ممالک ہوٹلز‘ گھر اور کمرشل پراپرٹی بھی ایف آئی اے کے افسرکی ہے۔ ابتدائی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ایف آئی اے کے بعض افسران نے اپنے رشتے داروں کے نام پر بھی بیرون ملک جائیداد خریدی ہوئی ہے۔ تمام ملوث افراد کے خلاف کارروائی ہوگی۔
تحقیقات