زرداری کمزور اور غیر مقبول لیڈر ہیں: نیویارک ٹائمز

نیویارک (نمائندہ خصوصی) پیپلز پارٹی کو متحد رکھ کر اگرچہ صدر زرداری نے اپنے لئے کچھ سیاسی مقام پیدا کرلینے کے باعث اس بات کا امکان ہے کہ وہ اقتدار میں برقرسر رہیں گے مگر وہ کمزور اور غیرمقبول لیڈر ہیں اور پاکستان کو درپیش اس سوال میں ابھی تک کوئی تبدیلی نہیں آئی کہ کب وہ منتخب لیڈر ملیں گے جن میں زبردست اقتصادی سکیورٹی اور سماجی مسائل حل کرنے کی اہلیت ہو۔ یہ بات امریکی اخبار نیویارک ٹائمز میں کہی گئی ہے۔ اخبار کا کہنا ہے کہ زرداری نے کئی ماہ بعد ایسا طرزعمل اختیار کیا جو صدر عموماً کیا کرتے ہیں\\\' یعنی انہوں نے تندوتیز تقریریں شروع کردی ہیں اور ملک کے اندر دورے شروع کردئیے ہیں اور خود کو ملک کے عوام میں سب سے بڑے عہدیدار کے طور پر منوانے کی کوشش میں ہیں۔ اخبار کے مطابق اگرچہ صدر زرداری امریکی پالیسیوں کا ساتھ دے رہے ہیں اور اپنے سیاسی مخالفین کی نسبت کہیں پہلے سے زیادہ دہشت گردی کیخلاف جنگ کی حمایت کررہے ہیں مگر ان کی کمزور سیاسی پوزیشن کے باعث یہ بات مشکوک ہے کہ کیا وہ امریکہ کی ان پالیسیوں کا موثر دفاع کرسکیں گے جن کی وہ حمایت کررہے ہیں؟ اسی کا نتیجہ ہے کہ امریکی عہدیدار اب بھی پاکستان کی فوج کےساتھ تعلقات پر انحصار کرتے ہیں جو کہ امریکہ کی عشروں کی روایت رہی ہے مگر اس سے اوبامہ انتظامیہ کو نقصان بھی ہورہا ہے۔ اخبار کا کہنا ہے کہ صدر زرداری کا کمزور ترین پہلو یہ ہے کہ فوج کیساتھ ان کے تعلقات کشیدہ رہے ہیں جو کہ ایک طاقتور ادارہ ہے۔