پاکستان کویت فرینڈ شپ

پاکستان کویت فرینڈ شپ

کویت پاکستان فرینڈ شپ ایسوسی ایشن کے بینر تلے سید ابرار حسین سفیرِ پاکستان ،کویت اور نور الدین داوڑ کمیونٹی ویلفیئر آفیسر کے اعزاز میں سفارت خانہ پاکستان میں نئی تعیناتی اور کویت آمد پر مقامی ہوٹل میں ایک استقبالیہ تقریب کا انعقاد عمل میں لایا گیا۔ پروگرام کا آغاز ناظمِ تقریب محمد افضل شافی نے حافظ محمد شبیر کی خوش الحان تلاوت قرآنِ پاک سے کیا۔ منتخب نعتیہ اشعار نے قلوب و اذہان کو روحانی فیض بخشا۔ ابتداً ناظم تقریب نے محفل کی غرض و غایت پر سیر حاصل روشنی ڈالی اور تقریب کی صدارت کیلئے تنظیم کے صدر رانا اعجاز حسین کو صدارتی مسند عطا کی گئی، مہمانِ خصوصی سید ابرار حسین ،سفیرِ پاکستان کو حاضرین نے تالیوں کی گونج میں کھڑے ہو کر خوش آمدید کیا۔ اس موقع پرتنظیم کی سب کمیٹیوںکے چیئرمین پروفیسرڈاکٹر محمد افضل (ایجوکیشن اسسٹنٹس)اور چیئرمین ڈاکٹر محمد آفتاب خان (میڈیکل اسسٹنٹس) اور کمیونٹی کی ہر دل عزیز شخصیت محمد عارف بٹ، صدر پاکستان بزنس کونسل،کویت اسٹیج پر جلوہ انداز تھے۔
تنظیم کے جنرل سیکرٹری نے مہمانوں کو ©” کے پی ایف اے“ کے ضمن میںتعارفی کلمات پیش کرتے ہوئے پروجیکٹرسکرین پر ایک پروفیشنل بریفنگ پیش کی۔ سلائیڈ شو کی تیاری نے تقریب کو چار چاند لگا دیئے۔ کمیونٹی ویلفیئر نور الدین داوڑ نے اپنے پہلے کمیونٹی خطاب میں کمیونٹی ویلفیئر کے حوالے سے اپنی ترجیحات پر روشنی ڈالی اور اپنے مکمل تعاون کا یقین دلایا۔ تنظیم کے صدر رانا اعجاز حسین نے مہمانان کے اعزاز میں استقبالیہ کلمات پیش کرتے ہوئے کہا کہ آپ کی کویت تشریف آوری پر خوش آمدید کہتے ہوئے مسرت محسوس کرتا ہوں ۔ یقیناً کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی آپ کے سفارتی تجربے اور فہم و فراست سے یقیناً فیض یاب ہو گی۔ تنظیم کے صدر نے واضح کیا کہ کویت میں مقیم کمیونٹی کے 
مابین اتفاق اور اتحاد ایک مثالی حیثیت رکھتا ہے۔ اس کے علاوہ چند خواہشات مہمانانِ گرامی کے حضور پیش کی گئیں، تاکہ سفیرِ محترم اپنی سفارتی فہم و فراست کو بروئے کار لاتے ہوئے اُن کا جائزہ لے سکیں ۔ صدر ” کے پی ایف اے“ رانا اعجاز حسین نے خواہش ظاہر کی کہ سفارت خانہ پاکستان ،کویت کی ذاتی عمارت تعمیر ہو سکے۔ اس کے علاوہ ویزوں کے اجراءمیں آسانی پیدا ہو ۔، مقامی اخبارات میں پاکستان کا وقار بہتر بنایا جا سکے۔ اور مقامی جیلوں میں معمولی نوعیت کے جرائم میں گرفتار پاکستانیوں کی معاونت ہو سکے۔سفیرِ محترم نے اپنے خطاب میں استقبالیہ کے انعقاد پر ”کویت پاکستان فرینڈشپ ایسوسی ایشن“ کے اراکین کا شکریہ ادا کیا ۔ اعتراف کیا کہ تنظیم کے ذمہ داران نے انتہائی پروفیشنل انداز میں بریفنگ کا اہتمام کیا ہے۔ مذید برآں انہوں نے کہا کہ میں اپنے قیام کے دوران مقدوربھر خدمت کو شعار بناو¾ں گا ، مذکورہ خواہشات کا پاس کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ میں چاہوں گا کہ کمیونٹی کی ایک سنٹرل باڈی بھی بنائی جا سکے تاکہ کمیونٹی کے تعاون سے کارِ خیر کے کام سر انجام پا سکیں ۔انہوں نے تنظیم کے اراکین کو حکومت ِ کویت ، حکومتِ پاکستان اور کویت ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کی جانب سے ملنے والے اعزازات پر مبارک باد پیش کی۔ناظمِ تقریب محمد افضل شافی کی نظامت نے بھی اس محفل کو چار چاند لگا رکھے تھے۔ بڑے مدبرانہ، ادبیانہ ، فاضلانہ انداز میں تقریب کو آگے بڑھاتے ہوئے تقریب کے دوسرے حصے جو کہ ایک مختصر شعری نشست پر مشتمل تھا کا آغاز کیا۔ صاحبِ کتاب شاعر کاشف کمال نے محفل سے یوں داد سمیٹی
ایک بھٹکے ہوئے راہی نے کہا تھا کاشف
زندگی میں کبھی پردیس نہ جانا میرے دوست
جناب بدر سیماب‘ جنرل سیکرٹری اربابِ فکر و فن یوں گویا ہوئے
سچ ہے جان ہو میری سوچتا ہوں میں لیکن
جان کے نکلنے میں دیر کتنی لگتی ہے
جناب صفدر علی صفدر ، صدر اربابِ فکر و فن اور صاحب کتاب شاعر یوں گویا ہوئے
چل صفدر گھر لوٹ چلیں اب تیرے چاہنے والوں نے درگاہوں پر دیپ جلا کر پھر کوئی منت مانی ہو گیحسنِ اتفاق یہ ہے کہ سفیرِ محترم بھی شعرو ادب کا اعلیٰ ذوق رکھتے ہیں۔ ایک قادر الکلام شاعر ہیں اگرچہ ان کا یہ ذوق ایک مشغلہ ہے۔ لیکن مشغلہ بھی خوب مشغلہ ہے،سامعین سے یوں گو یا ہوئے
خدا کی شان ہے بارش بھی ہو جاتی ہے فوراً ہی
زمین دل میں جب بھی کوئی غم کے بیج بوتا ہے
تقریب کا بڑا حسن دو نمازوں (مغرب اور عشائ) کا اہتمام تھا۔ جس کے بعد تمام افسران سفارت خانہ پاکستان کویت، مختلف تنظیموں کے صدور ، مقامی پرنسپل صاحبان اور ایگزیکٹو ممبران ”کے پی ایف اے“ کی خدمت میں عشائیہ پیش کیا گیا۔ رپورٹ:کاشف کمال
امیر کویت کا قوم سے خطاب
 امیر کوےت شیخ صباح الاحمدالجابرالصباح نے کوےت کی آئینی عدالت کی جانب سے کوےت پارلیمان کو تحلیل کرنے اورنئے انتخابات کرانے کا حکم مانتے ہوئے کہاہے کہ ہمیں اپنی عدالتوں کا احترام ہے اور ہرآئینی اورقانونی کی پاسداری کی جائے گی ۔عدالت کے حکم کو قبول کرتے ہیں اورآئندہ بھی قبول کرتے رہیں گے ۔امیر کوےت شیخ صباح الاحمد الجابرالصباح نے قوم کو خطاب کرتے ہوئے کہاکہ کوےت جمہورےت اورآئین کی پاسداری کا ملک ہے ہم کسی قسم کی محاذنہیں چاہتے عدالت احترام ہمارے لئے فرض ہے بعض لوگ ملک میں انارکی پھیلانا چاہتے ہیں اس لئے ہم عوام کو متحدرکھنے کے لئے تمام جمہوری اقدامات کررہے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ 
ملک میں قانون کی بالادستی قائم رکھیں گے اورکسی کو قانون کو ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دیں گے ہمیں اپنے سیکیورٹی اداروں پر فخرہے جنہوں نے ہر حالات میں ملک وقوم کی حفاظت کی ۔انہوںنے کہاکہ ہم قانونی اورآئینی ذمہ داری پوری کریں گے ہم عوام کے ساتھ ہیں اورعوام ہمارے ساتھ ہیں ۔شیخ صباح نے مزید کہاکہ کوےت شوری یا مشاورت کی بنیاد پر قائم کیا گےاآئین ہمارے لئے مقدس ہے اس پر عمل درآمد کرانا اورکرنا ہمارافرض ہے جو ہم پوراکررہے ہیں ۔ کوےت بھرمیں 6جولائی 2013ءکو بلدیاتی انتخابات ہورہے ہیں جس سے عام انتخابات سے قبل انتخابی گہماگہمی ہوگی ہے جبکہ عام انتخابات 16اگست تک متوقع ہیں ۔کوےت میں سیاسی جماعت نہ ہونے کی وجہ سے آزادحیثےت سے انتخاب لڑا جاتا ہے لیکن اس میں حکومتی اوراپوزیشن میں شمولےت بن کر جیتنے والے امیدوارسامنے آتے ہیں ۔