قرآن پاک تا ابد محفوظ و محترم

علامہ منیر احمد یوسفی
دین اسلام پوری کائنات کو سلامتی اور امن کی دعوت دیتا ہے ۔ اسلام کی دعوت حکمت‘ مواعظ حسنہ اور احسن مجادلہ پر مشتمل ہے۔ دین اسلام سچائیوں‘ صداقتوں‘ انصاف اور انسانی اقدار کو فروغ دیتا ہے ۔ اﷲ تبارک وتعالیٰ وحدہ لاشریک کی احدیت‘ صمدیت اور یکتائیت اور معبودانِ باطل کی تردید و تکذیب کا پرچار کرتا ہے۔ حقوق اﷲ اور حقو ق العباد کی ادائیگی اور تحفظ پر زور دیتا ہے۔ شرک و کفر اور منافقت کو مٹا تا ہے۔ اﷲ رب العالمین کے نام کی سربلندی اور رسولِ کریم رو¿ف و رحیم کی عظمت وشان اور ناموسِ رسالت کے تحفظ کےلئے جانی اور مالی قربانی کا درس دیتا ہے۔ قرآن مجید فرقانِ حمید پوری کائنات کی رہنمائی کرتا ہے۔ یہ صرف ایک کتاب ہی نہیں بلکہ احادیث صحیحہ اور سنت مبارکہ کی روشنی کےساتھ مکمل ضابطہ حیات بھی ہے۔ یہود و نصاریٰ اور ہنود بھی قرآن مجید سے رہنمائی حاصل کرتے ہیں۔ یہ اسلامی، الہامی اور آفاقی کتاب ہے۔
جو پوری انسانیت کی فلاح اور کامیابی کا لازوال منشور ہے۔ دنیا کے منشور انسانی اغراض و مقاصد اور ذاتی تحفظات پر مبنی ہوتے ہیں جبکہ قرآن مجید خدائی منشور اور پوری کائنات کیلئے ضابطہ حیات ہے۔
دین اسلام جو امن عالم‘ غیرت وحمیت کے فروغ اور اِنسانوں کی دنیا وآخرت میں کامیابی کا پرچار کرتا ہے، اسکا منشور و دستور ایک عظیم الشان اور لازوال کتاب کی صورت میں رب ذوالجلال و الاکرام نے عطا فرمایا ہے جو تقریباً 23 سال تک نبی آخر الزماں، امام الانبیاءحضرت محمد مصطفی پر نازل ہوتا رہا جس میں اﷲ تبارک وتعالیٰ جل مجدہُ الکریم نے اپنی عظمتیں اور شانیں‘ حضرت سیدنا آدمؑ سے لیکر سید المرسلین حضرت سیدنا محمد مصطفی کی بے مثال تعلیم و تبلیغ اور عظمتیں اور رفعتیں‘ صدیقین‘ شہداءاور صالحین کے وقار کا بیان اور تحفظ و تقدس روشنی کے میناروں کی طرح عیاں بیاں ہے۔
قرآنِ مجید وہ آخری الہامی اور آفاقی لازوال اور لاریب کتاب ہے جو نبی آخرالزماں کی طرح نہ صرف یہ کہ پہلے انبیاءکرامؑ کی تصدیق کرتا ہے بلکہ انکی تعظیم و توقیر اور احترام کی پرزور تعلیم و تلقین فرماتا ہے۔ ہم مسلمان ہونے کے ناطے سے تمام انبیا ءکرامؑ اور الہامی کتابوں کی تعظیم و توقیر کرتے ہیں ہم کسی نبیؑ اور کسی الہامی کتا ب کی توہین کا تصور بھی نہیں کرسکتے۔
قرآن مجید یہود ونصاریٰ کے انبیاءکرامؑ اور انکی کتابوں کی تصدیق وتعظیم بیان فرماتا ہے مگر یہود و نصاریٰ مختلف طریقوں سے مسلمانوں کو اذیت پہنچانے کیلئے اشتعال انگیز حرکتیں کرتے رہتے ہیں۔ کبھی خاکے بنا کر شان رسالت مآب میں گستاخی کے مرتکب ہوتے ہیں اور کبھی قرآن مجید فرقان حمید کے مقدس نسخوں کو نذرآتش کردیتے ہیں ۔ یہ ملعون لوگ اس زمین پر رہنے کے قابل نہیں۔
یہود و نصاریٰ ذہنی طور پر اس قدر مفلوج ہوچکے ہیں کہ انکی سمجھ کام نہیں کرتی کہ قرآن مجید اور رسول کریم رو¿ف ورحیم تو تمام انبیاءکرامؑ اور پہلی کتابوں اور صحیفوں کی وکالت فرماتے ہیں مگر ان اقوام کے بعض بدبخت اور ملعون افراد ہر وقت توہین اور گستاخی کے منصوبے بناتے رہتے ہیں۔ پچھلے سال 29 اپریل کو ملعون امریکی پادری ٹیری جونز نے ناپاک جسارت اور گستاخی اور ناقابل معافی حرکت کی کہ قرآنِ مجید فرقانِ حمید کے نسخے نذرآتش کئے اور شانِ رسالت مآب میں گستاخی کی ہے۔ امریکی اخبار ”دی جنیسویلی سن“ کی رپورٹ کے مطابق معلون امریکی پادری اور اسکے ساتھی نے فلوریڈا کے شہر گینز ویلے میں ایک چرچ کے سامنے نعوذ باللہ قرآنِ مجید کے متعدد نسخے نذرآتش کردئیے اور شان رسالت مآب میں گستاخی کی۔ اس اشتعال انگیز اور گستاخانہ عمل کے وقت 20 کے قریب دیگر ملعون اشخاص بھی موجود تھے جبکہ چرچ کی طرف جانیوالی سڑک پر ملعون اور مردود جہنمی پولیس افسران تعینات تھے تاکہ ملعون امریکی پادری ٹیری جونز کو ناپاک جسارت اور مذموم عمل کے سرانجام دینے میں کسی قسم کی رکاوٹ کا سامنانہ کرنا پڑے۔ قرآن مجید کی بے حرمتی کے وقت پولیس کی موجودگی اور ملعون پادری کا تحفظ اِس بات کا بھی ثبوت تھا کہ ملعون امریکی حکومت کی سرپرستی میں یہ آگ وخون کا کھیل کھیلا جارہا تھا۔
اب پھر 10 اپریل 2013ءکو بد نام زمانہ امریکی پادری ملعون ٹیری جونزنے قرآن مجید کو نذرآتش کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس مرتبہ اِس ملعون پادری نے اعلان کیا ہے کہ اسکی شیطانی تنظیم نام نہاد نائن الیون کی برسی کے موقع پر ایک شیطانی تقریب منعقد کرےگی جس میں اسکی ملعون‘ شیطانی تنظیم نعوذ باللہ 2998 نسخے جلائیگی ملعون ٹیری جونز کا کہنا ہے کہ ورلڈ ٹریڈ سنٹر پر حملہ میں چونکہ 2998 افراد مرے تھے‘ اسلئے اتنی ہی تعداد میں قرآن مجید کے نسخے جلائے جائیں گے۔ اس گستاخ ملعون پادری نے اپنے زعم باطل میں قرآن مجید فرقانِ حمید پر دہشت گردی کا مقدمہ بھی چلایا تھا اور نعوذ باللہ قرآن مجید کو دہشت گرد قرار دےکر قرآنِ مجید کے نسخے جلائے تھے جس پر پوری دُنیا میں خصوصاً پاکستان میں مسلمانوں کی طرف زبردست اِحتجاجی مظاہرے کئے گئے تھے۔ اب پھر ملعون ٹیری جونز نے مذموم شیطانی اعلان سے پوری دنیا کے مسلمانوں میں شدید غم و غصہ اور بے چینی کی لہر دوڑ گئی ہے۔ عوامی سطح پر مسلمان اپنے جذبات اور عقیدت و احترام کا اظہار کرنے میں کوتاہی نہیں کرتے مگر پوری دنیا کے حکمران خواب غفلت میں سوئے ہوئے ہیں جو اپنی غیرت اور جذبات کا اظہار کرنے سے محروم ہیں۔ آج بین الاقوامی سطح پر ایمان افروز انداز میں اپنے جذبات کا اظہار کرنے کی ضرورت ہے اور 9/11 کے آنے سے پہلے ملعون ٹیری جونز کے شیطانی عمل کو کیفرکردار تک پہنچانے کیلئے سفارتی اور اخلاقی سطح پر حکومت امریکہ کو شیطانی کاموں سے باز رکھنے کی ضرورت ہے اور اس شیطانی فعل کو منعقد کرنےوالوں کو امن عالم کے پیش نظر ہمیشہ کیلئے روک دیا جائے اور مسلمان حکمرانوں کو ایسے ملعون گستاخوں کو دندان شکن جواب دینے کیلئے بروقت تیار رہنا چاہئے۔ ملعون پادری ٹیری جونز جو شیطانی کھیل کھیل رہا ہے یہ مسلمان کی غیرت کو چیلنج ہے لہٰذا ہر سطح پر انسانی‘ ایمانی اور عملی مظاہرہ کرنا چاہئے جس سے ملعون پادری ٹیری جونز کے سرپرستوں کی راتوں کی نیند حرام ہوجائے اور یہ مذہبی دہشت گرد ہمیشہ کیلئے ایسی حرکات سے باز آجائیں جن سے مسلمانوں کی غیرت ایمانی کو چیلنج کیا جا رہا ہے۔
آج اگر بین الاقوامی پیچیدگیاں پاسپورٹ کی پابندیاں اور ایک ملک سے دوسرے ملک جانیوالے لوگوں کی سکریننگ راستے میں حائل نہ ہوتی تو قرآنِ مجید کو جلانے کی مذموم جسارت اور ملعون عمل کرنیوالے اور ہمارے پیارے محبوب نبی آخر الزماں حضرت محمد مصطفی کے خاکے بنانیوالے کب کے واصل جہنم ہوچکے ہوتے۔