اقبال راہی کے اعزاز میں اکیڈمی ادبیات میں شام منائی جائے گی

ص بخاری


بزرگ شاعر اقبال راہی کے اعزاز میں 16 اپریل کو اکیڈمی ادبیات 203 آصف بلاک علامہ اقبال ٹاؤن میں شام چار بجے ایک شام منائی جائے گی۔ صدارت ڈاکٹر اجمل نیازی کریں گے جبکہ مہمانان خصوصی میں حکیم سلیم اختر ملک‘ اسلم کمال اور رخشندہ نوید شامل ہیں۔

____________________
استاد سخن ڈاکٹر بیدل حیدر کی گیارویں برسی پر محفل مشاعرہ
ریاض ادم ادبی تنظیم، کاروان ادب کبیر والا اور پاکستان ہیومن رائٹس کونسل، سچ کے زیر اہتمام مسلم کامرس کالج اینڈ کمپیوئر سائنسز کبیر والا میں استاد سخن ڈاکٹر بیدل حیدری کی گیارویں برسی کے موقع پر ایک محفل مشاعرہ معروف اردو شاعر افسانہ نگار منیر راہی کے زیر صدارت منعقد ہوا سیدذوالقرنین حیدر صدر پریس کلب کبیر والا، فیصل ہاشمی، بابا طالب بٹالوی مہمانان خصوصی تھے۔ میڈم سلمیٰ رانی صدر کلچرل ونگ ’’سچ‘‘ پنجاب، رضا اللہ خاں پرنسپل، مہر حارث حفیظ، ساغر مشہدی اور رفیق ملک مہمانان خصوصی تھے۔ نقابت ریاض ارم نے کی تقریب دو حصوں پر مشتمل تھی۔ پہلے حصے میں ڈاکٹر بیدل حیدری پر مضامین اور نظمیں پڑھی گئیں جبکہ دوسرے حصے میں محفل مشاعرہ ہوئی۔ تلاوت کلام پاک محمد ارم شہزاد نے کی محمد امیر عبداللہ نے نعت شریف پیش کی۔ ڈاکٹر بیدل حیدری کو ان کی ادبی خدمات پر خراج عقیدت پیش کیا۔ آخر پر منیر راہی نے ڈاکٹر بیدل حیدری پر مضمون پڑھا اورکلام سنایا۔

____________________

ایجوکیشن یونیورسٹی میں ادبی تقریب

ایجوکیشن یونیورسٹی لاہور کے مین ہال میں ایک پُروقار ادبی تقریب کا اہتمام کیا گیا۔ یہ تقریب جدید غزل کے ممتاز شاعر، اشرف جاوید کے اعزاز میں منعقد کی گئی۔ یونیورسٹی کے طلبا و طالبات کی کثیر تعداد نے اس میں شرکت کی۔ تقریب کا اہتمام پروفیسر ڈاکٹر نبیل احمد نبیل نے کیا تھا۔ تلاوت کلام پاک سے تقریب کا آغاز ہوا، باقاعدہ مہمانوں میں جناب اشرف جاوید، جناب ڈاکٹر محمد عالم خان اور پروفیسر ناصر بشیر کے نام نمایاں ہیں۔ ڈاکٹر وحید خان نے بھی بطور خاص شرکت کی۔ڈاکٹر نبیل احمد نے اشرف جاوید کی شاعری پر بات کرتے ہوئے کہا کہ بلاشبہ ان کی شاعری اپنے عہد کا احاطہ کرتی ہے۔ زندگی کی مختلف پرتیں اور مختلف رنگ ان کی شاعری میں دیکھے جا سکتے ہیں۔ 

ناصر بشر نے کہا اشرف جاوید کا شعری مجموعہ ’’نخل نوا‘‘ کی تقریب رونمائی ملتان میں ہوئی جس میں ملتان کے تمام ادیبوں، شاعروں، نے اشرف جاوید کی شعری صلاحیتوں کی تعریف کی۔ ڈاکٹر عالم خان نے کہا کہ اشرف جاوید کی شاعری میں ہمارا عہد سانس لیتا ہوا محسوس ہوتا ہے۔ اشرف جاوید نے غزل کو کلاسیکل اور جدیدیت کے باہم امتزاج سے ایک نئی صورت دی ہے جو یقیناً اس کا حصہ ہے۔ آخر میں ناصر بشر اور اشرف جاوید نے اپنا کلام پیش کیا۔ اساتذہ کے ساتھ ساتھ طلبا و طالبات نے بہت انہماک کے ساتھ شعرا کا کلام سنا اور ہر اچھے شعر پر دل کھول کر داد دی۔ تقریب کے آغاز میں پرنسپل نے مہمانوں کی اپنے آفس میں چائے کیساتھ تواضع کی ۔