حرمت ِ رسول ﷺ

کالم نگار  |  رضا الدین صدیقی
حرمت ِ رسول ﷺ

اللہ تبارک وتعالیٰ کی توحید پر ایمان کے ساتھ اللہ رب العزت کے آخری رسول محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت پر ایمان لانا فرض ہے۔ آپ کی نبوت دائمی اور عالمی ہے اور آپ خاتم النبین ہیں۔ اس اعتقاد کے بغیر انسان نہ تو مومن کہلا سکتا ہے اور نہ ہی وہ دائرہ اسلام میں داخل ہوسکتا ہے۔ آپ کی مطلق وغیر مشروط اطاعت اور اتباع بھی شرعاً لازم وواجب ہے اور آپ کی تعظیم وتوقیر بھی ۔ آپ کی حرمت وناموس کا پاس اور لحاظ اور اس کی خاطر جان و مال قربان کر دینے کا جذبہ ایما ن کی اسا س ہے۔ایمان کاحقیقی ذوق اور اس کی حلاوت اسی شخص کو حاصل ہوسکتی ہے ،جسے ’’ اللہ اور اس کا رسول تمام چیزوں سے زیادہ محبوب ہوجائیں۔‘‘(بخاری) 

٭امام نووی ’’ حلاوۃِ ایمان ‘‘ کی وضاحت کرتے ہوئے لکھتے ہیں : انسان کو طاعت (اعمال صالحہ ) بجالانے اور اللہ اور اس کے رسول کی رضاء کی خاطر مشقّت اٹھانے میں لذت محسوس ہواور وہ اسے دنیا کے مال ومتاع پر ترجیح دے۔ اللہ سبحانہ ٗ وتعالیٰ کے لیے بندے کی محبت یہ ہے کہ اس کی اطاعت کرے اور اس کی مخالفت ترک کر دے، اسی طرح جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ محبت کا معنی بھی یہی ہے ،آپ کے احکام کی فرما ں برداری کرے اور اس کی مخالفت سے مجتنب رہے۔اللہ رب العزت کا ارشاد ہے: ’’ تم لوگ اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لائو اور آپ کی اطاعت کرو اور آپ کی تعظیم بجا لائو۔(الفتح :9)
٭دوسرے مقام پر ارشاد ہوتا ہے: ’’ اے حبیب ! آپ کہہ دیجئے کہ تمہارے والدین اور تمہاری اولادیں اور تمہارے بھائی اورتمہارے کنبے اور وہ مال جو تم نے کمائے ہیں اور جو تجارت جس کے نقصان سے تم ڈر رہے ہو اور وہ آشیانے جنہیں تم پسند کرتے ہو ۔یہ (سب) تم کو اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے اور اسکی راہ میں جہاد کرنے سے زیادہ عزیزِ(خاطر) ہیں۔تو منتظر رہو یہاں تک کہ اللہ تعالیٰ اپنا حکم بھیج دے اور اللہ نافرمانوں کو ہدایت نہیں دیتا ۔ (التوبہ : 24)
٭علامہ قرطبی اس آیت کی تفسیر میں لکھتے ہیں : ’’اس آیت میں اللہ اور اس کے رسول کے ساتھ محبت کے واجب ہونے کی دلیل ہے اور اس مسئلے میں امت کے درمیان کوئی اختلاف نہیں ہے‘‘۔ حضرت عبداللہ بن ہشام روایت کرتے ہیں کہ ہم حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ تھے۔ آپ حضرت عمر بن خطاب کا ہاتھ تھامے ہوئے تھے۔حضرت عمر نے آپ کی خدمت میں اپنی قلبی کیفیت کا اظہار کیا اور کہا یا رسول اللہ آپ اپنی جا ن کے سو ا ہر چیز سے زیادہ عزیز ہیں ۔
آپ نے فرمایا : اس ذات کی قسم جس کے قبضہ میں میری جان ہے۔ جب تک میں تمہارے نزدیک اپنی جان سے بھی زیادہ محبو ب نہ ہوجائوں تم مومن نہیں ہوسکتے ۔حضرت عمرنے عرض کیا : اب آپ مجھے اپنی جان سے بھی زیادہ عزیز تر ہیں ۔ ارشاد ہوا : اے عمر ! اب تمہارا ایمان کامل ہوگیا ہے۔ (صحیح بخاری)
یہ زندگی کا ہنر آپ نے سکھایا مجھے
خیال و فکر میں عقل وشعور آپ سے ہے