حسنِ تربیت

کالم نگار  |  رضا الدین صدیقی
حسنِ تربیت


حضرت بابا فرید الدین گنج شکر رحمة اللہ علیہ نے خواجہ نظام الدین کے علمی معاملات پر ہی توجہ نہیں مبذول فرمائی بلکہ اُنکے اخلاق حسنہ کو سنوارنے کی طرف بھی بڑا دھیان دیا۔ صوفی مبلغین نفی ذات، مخالفت نفس ،شکست انا،عاجزی ،انکساری پر بہت زور دیتے ہیں۔ مخلوق سے محبت کرنا اورانھیں خود سے راضی رکھنا بہت ضروری خیال کیاجاتا ہے۔ ایک بار شیخ کبیر نے اپنے درس کے دوران ارشادفرمایا ”دشمنوں کوراضی کرو اورحق داروں کو ان کا حق دو“خواجہ نظام نے اپنے معاملات پر غور کیا تو انھیں یاد آیا کہ انھوں نے ایک بزار سے کپڑا خرید اتھا۔ جس کے بیس جیتل (اس زمانے کا سکہ)ابھی باقی ہیں۔ ایک شخص سے مطالعے کیلئے کتاب لی تھی وہ ان سے کھوگئی واپس نہیں ہوسکی۔وہیں پر بیٹھے بیٹھے طے کیا کہ دلی واپس جاتے ہی جس طرح بھی ممکن ہوگا، انھیں راضی کروں گا۔ واپس آئے تو اپنے دوست کے پاس گئے اوراس سے بڑی معذرت کی اورکہاکہ آپ کی کتاب مجھ سے گم ہوگئی۔ میں نیت رکھتا ہوں کہ کہیں سے کاغذحاصل کروں اوروہ کتاب آپ کو نقل کردوںگا۔وہ دوست تھوڑی دیر آپ کو دیکھتے رہے پھر کہنے لگے آپ بابافرید کے پاس سے آئے ہیں،اس جگہ کا ثمرہ ہی یہی ہے کہ اللہ کی رضا حاصل ہوجائے وہ کتاب میںنے آپ ہی کو بخش دی۔ دکان دار کی خدمت میں حاضر ہوئے،اسے دس جیتل جو اس وقت آپکے پاس تھے، اسے پیش کردیے ۔ اوراسے یاد دلایا کہ آپکے ۲۰ جیتل میری طرف ادھار ہیں۔ باقی رقم بھی عنقریب اداکردوں گا۔ دکان دار نے نم دیدہ ہوکر کہاجہاں سے آپ آئے ہیں وہاں سے تربیت پاکر آنے والے ایسے ہی اخلاق سیکھ کرآتے ہیں۔ باقی رقم آپ میرے طرف سے ہدیہ سمجھئے۔ایک دن شیخ کبیر کی خدمت میں نورانی چہروں والے چھ سات نوعمر درویش حاضر ہوئے اورکہنے لگے ہمارا آپس میں کچھ اختلاف ہے۔اپنے کسی مرید کو حکم فرمائیں ہمارے درمیان فیصلہ کردے،آپ نے خواجہ نظام اورسیّد بدرالدین اسحٰق سے فرمایا۔ ان کا معاملہ سن لو۔ان درویشوں نے ایک دوسرے کی شکایت بیان کرنا شروع کی۔لیکن بڑے نرم اورلطیف لہجے میں۔کہ اس روز آپ نے ایسی بات فرمائی تھی،اورمیںنے یہ عرض کیا تھا۔ اس کے بعد آپ نے یہ ارشاد فرمایا ،میں اس سے واقف نہیں تھا، سمجھا نہیں غلط جواب دے دیا۔ اسکے ساتھی نے بھی اسی نرمی سے کہا آپ نے تو یہی فرمایا تھا مگر غلطی مجھ سے ہوئی واقعی آپ حق پر تھے ۔اسی طرح گفتگو ہوتی رہی۔خواجہ نظام اورمولانا بدران لوگوں کی گفتگو سے اتنے متاثر ہوئے کہ ان پر گریہ طاری ہوگیا۔ کہنے لگے یہ لوگ ہم سے اپنا فیصلہ کروانے نہیں آئے بلکہ ہماری تربیت کیلئے آئے ہیں ۔کہ ایک دوسرے سے معاملات کیسے کرنے چاہیں۔