ناراض بلوچ در اصل دہشت گرد اور"را" کا لشکر ہیں جو پاک چائنہ اقتصادری راہداری کو ناکام بنانا چاہتے ہیں: وزیرداخلہ بلوچستان

خبریں ماخذ  |  خصوصی نامہ نگار
ناراض بلوچ در اصل دہشت گرد اور

سرکاری خبررساں ادارے کے مطابق سانحہ مستونگ کے بعد فرنٹیرکور کا علاقے میں سرچ آپریشن جاری ہے جس میں ایف سی کے پانچ سو جوان حصہ لے رہے ہیں،آپریشن کی نگرانی ہیلی کاپٹرسے بھی کی جارہی ہے جب کہ آپریشن کے نتیجے میں اب تک سات دہشت گرد مارے جا چکے ہیں۔
دوسری جانب وزیرداخلہ بلوچستان سرفرازبگٹی نےصوبائی اسمبلی میں سانحہ مستونگ پرپیش کی جانے والی مذمتی قرارداد پر اظہارخیال کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے دہشت گردوں کو بہت ناراض بلوچ کہہ دیا در اصل یہ دہشت گرد اور  ’’را‘‘ کا لشکر ہیں جو پاک چائنہ اقتصادری راہداری کو ناکام بنانا چاہتے ہیں۔میرسرفراز بگٹی نےکہا کہ وہ وثوق سے یہ کہہ سکتےہیں کہ مستونگ سانحہ’’را‘‘ فنڈڈ لشکر کی کارروائی ہے، سیکیورٹی فورسز کے پاس ناقابلِ تردید شواہد ہیں کہ اس میں ’’را‘‘ ملوث ہے۔انہوں نےبتایاگیا ہے کہ مستونگ سانحے میں ایک خاتون بھی لاپتہ ہے۔اس موقع پرصوبائی وزیر اطلاعات عبدالرحیم زیارت وال نےدہشت گردی کی مذمت کرتےہوئےکہا کہ سانحہ مستونگ کےمتاثرین کی ہرممکن مدد کریں گے،شاہراہوں کےتحفظ کے لیے مزید اقدامات بھی کیے جائیں گے۔