خیبر پی کے:8 سال بعد آج بلدیاتی انتخابات ہونگے، الیکشن کمشن نے صوبائی حکومت کو کنٹرول روم قائم کرنے سے روک دیا

خیبر پی کے:8 سال بعد آج بلدیاتی انتخابات ہونگے، الیکشن کمشن نے صوبائی حکومت کو کنٹرول روم قائم کرنے سے روک دیا

پشاور+ اسلام آباد (نیوز ایجنسیاں+ نوائے وقت رپورٹ) صوبہ خیبر پی کے میں آج 8 سال بعد بلدیاتی الیکشن ہوں گے جس میں ایک کروڑ31 لاکھ سے زائد ووٹرز اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے اور 41 ہزار 762 نشستوں پر اپنے پسندیدہ امیدواروں کا چنائوکریں گے۔ فوج ، ایف سی اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں نے حساس علاقوں کا کنٹرول سنبھال لیا، فوج کی نگرانی میں 7 کروڑ 22 لاکھ بیلٹ پیپرز ریٹرننگ افسروں کے حوالے کر دئیے گئے ، صوبہ بھر میں 11 ہزار 221 پولنگ سٹیشن قائم کئے گئے ہیں۔ پولنگ عملہ نے چارج سنبھال لیا،آج صوبے بھر میں عام تعطیل ہوگی۔ الیکشن کمشن نے تمام تیاریاں مکمل کرلیں۔ بیلٹ پیپرز 7 مختلف رنگوں میں چھاپے گئے ہیں۔ جنرل نشستوں کیلئے سفید،خواتین کی نشست کیلئے گلابی رنگ کے بیلٹ پیپر چھاپے گئے ہیں، اقلیتوں کے لئے برائون،کسان اور مزدور نشستوں کیلئے ہلکے سبز رنگ کے بیلٹ پیپرز چھاپے گئے، الیکشن کمشن نے پولنگ سٹیشن کے قریب کیمپ،پارکنگ اور اجتماع پر مکمل پابندی لگائی ہے، ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ صوبہ بھر کے 24 اضلاع میں پولنگ صبح 8 بجے شروع ہوگی اور بغیر کسی وقفہ کے شام 5بجے تک جاری رہے گی۔ اختیارات کی نچلی سطح پرتقسیم کے اس نظام میں ویلج اور نیبرہڈکونسلزکو متعارف کرا یاجا رہا ہے۔ نیبرہڈ شہری اور ویلج کونسل دیہی علاقوں کی محلہ کونسلیں ہونگی۔ صوبہ بھر میں 503 نیبر ہڈ اور 2ہزار 836 ویلج کونسلز قائم کی گئی ہیں جبکہ مجموعی طورپر41ہزار نشستوں پر 84ہزار 420امیدوار میدان میں ہیں۔ انتخابات نچلی سطح پرغیرجماعتی جبکہ ضلع اور تحصیل کی سطح پرجماعتی بنیادوں پرہونگے۔ ضلع وتحصیل کے انتخابات میں ضلعی کونسلز کی 978نشستوں پر 5ہزار 480جبکہ ٹائون اور تحصیل کونسلز کی 9سو 78نشستوں پر 5ہزار 907امیدواروں میں مقابلہ ہے۔ نیبرہڈ اور ویلج کونسلزکی 23ہزار 111، جنرل نشستوں پر امیدواروں کی تعداد 39ہزار 79ہے۔ اقلیتی کے نشستوں کی تعداد 3ہزار339ہے لیکن صرف 349امیدوار سامنے آئے ہیں۔ صوبہ کے ایک ضلع کوہستان کا معاملہ عدالت میں ہونے کی وجہ سے وہاں انتخابات وہاں نہیں ہورہے۔ ادھر بلدیاتی انتخابات کے روز انتخابی جھگڑوں اور دہشتگردی کے ممکنہ اطلاعات کے بعد حکومت نے ہسپتالوں میں ہر قسم کی تیاری کے احکامات جاری کرتے ہوئے ایمرجنسی نافذ کردی اور ڈاکٹروں کی چھٹیاں منسوخ کردی گئی ہیں۔ الیکشن کمشن نے خیبر پی کے میں بلدیاتی انتخابات کے دوران خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کی اطلاعات کا نوٹس لیتے ہوئے کہا ہے کہ خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کے لئے زبانی اور تحریری معاہدوں کی اطلاعات سامنے آئی ہیں۔ خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنا جرم تصور کیا جائے گا۔ صوبائی حکومت اور ڈسٹرکٹ ریٹرننگ افسر خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے والوں کے خلاف کارروائی کریں۔ آئی جی خیبر کے ناصر درانی نے کہا ہے کہ بلدیاتی انتخابات میں ایک لاکھ 10ہزار پولیس اہلکار تعینات ہیں۔ ڈی آر او نوشہرہ نے چیف الیکشن کمشن کو خط لکھا ہے کہ یونین کونسل بالو میں عمائدین نے خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روک دیا ہے۔ عمائدین نے فیصلہ کیا ہے کہ 5353خواتین ووٹ نہیں ڈالیں گی۔ ڈی آر او کے خط پر چیف الیکشن کمشنر سردار رضا نے سخت نوٹس لیا ہے۔ انہوں نے چیف سیکرٹری خیبر پی کے کو فوری نوٹس لینے کی ہدایت کی ہے۔ قبل ازیں الیکشن کمشن نے چیف سیکرٹری خیبر پی کے کو خط لکھا ہے۔ صوبائی حکومت بلدیاتی انتخابات کی مانیٹرنگ کیلئے قائم کنٹرول روم ختم کرے۔ مانیٹرنگ کیلئے الیکشن کمشن کے مرکزی دفتر میں کنٹرول روم قائم ہے۔ دریں اثناء محکمہ اطلاعات خیبر پی کے نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت انتخابات کی نگرانی کا کوئی ارادہ نہیں رکھتی۔ حکومت امن و امان اور ہسپتالوں کی ضروریات سے لاتعلق نہیں رہ سکتی، سیل ووٹروں و امیدواروں کی شکایات کی مانیٹرنگ کرتے ہیں، دونوں سیل کسی بھی ہنگامی صورتحال کی مانیٹرنگ کرتے ہیں۔ آئی این پی کے مطابق خفیہ اداروں کی اطلاع پر پولیس نے چھاپہ مارکر گاڑی سے جعلی بیلٹ پیپرز برآمد کرکے جمعیت علماء اسلام کے امیدوار سمیت 5افراد کو گرفتار کر لیا۔ جمعیت علمائے اسلام کے امیدوار مفتی سید عالم کو گرفتار کیا گیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق تنگی روڈ پر چارسدہ پر پولیس نے پرنٹنگ پریس پر چھاپہ مارکر جعلی بیلٹ پیپرز برآمد کر لئے گئے۔ الیکشن کمشن آف پاکستان نے کہا ہے کہ خیبر پی کے کے بلدیاتی انتخابات میں کم بیلٹ پیپرز کی چھپائی کی وجہ متعدد امیدواروں کا بلامقابلہ منتخب ہونا ہے۔ مخصوص نشستوں پر موصول ہونے والے کاغذات کی تعداد کم رہی جبکہ اقلیتوں کی مخصوص نشستوں پر بھی کاغذات نامزدگی کم جمع ہوئے۔