فوڈ سپورٹ پروگرام میں خورد برد‘ پاکستان پوسٹ کے ذریعے ترسیل بند کرنیکا فیصلہ

لاہور (کامرس رپورٹر) پنجاب حکومت نے محکمہ پاکستان پوسٹ کے اہلکاروں کی جانب سے فوڈ سپورٹ پروگرام کے فنڈز خورد برد کئے جانے پر فیصلہ کیا ہے کہ فنڈز کی خورد برد روکنے کے لئے پاکستان پوسٹ کے ذریعے مستحقین کو فنڈز کی ترسیل بند کر دی جائے۔ ذرائع کے مطابق غور کیا جا رہا ہے کہ شہری علاقوں میں مستحقین کو اے ٹی ایم کارڈز جاری کئے جائیں جبکہ دیہی علاقوں میں مستحقین کو فنڈز کی فراہمی کے لئے طریقہ کار وضع کیا جائے گا۔ اس ضمن میں ایم پی اے حضرات سے مشاورت کی جا رہی ہے۔ فوڈ سپورٹ پروگرام کے تحت فنڈز کی ترسیل کے حوالے سے پنجاب میں مستحقین نے 1500 درخواستیں درج کرائیں ہیں جن میں ڈاکیوں نے کسی کو 4 قسطیں دیں تو پانچویں قسط کھا گئے اس ضمن میں 161 کیسز درج کرائے گئے جن میں سے 25 کیس زیر التوا ہیں۔ باقی پر ایکشن لیا گیا ہے۔ فیصل آباد میں محکمہ ڈاک کے اہلکار جیل میں بھیجے گئے جبکہ 2 اہلکار مفرور ہیں۔ ذرائع کے مطابق حکومت پنجاب غ ور کر رہی ہے کہ مستحقین کو فنڈز کی فراہمی محکمہ ڈاک کی بجائے شہری علاقوں کے مستحقین کو اے ٹی ایم کارڈز کے ذریعے کی جائے اس ضمن میں چیف سیکرٹری پنجاب کی سربراہی میں ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی قائم کی گئی ہے جس میں صوبائی سیکرٹری خزانہ\\\' صوبائی سیکرٹری صنعت\\\' محکمہ انفارمیشن ٹیکنالوجی\\\' پنجاب بنک کے نمائندے اور وزیراعلیٰ فوڈ سپورٹ سکیم کے ایڈمنسٹریٹر ایس اے حمید شامل ہیں جو حکومت پنجاب کو اس ضمن میں اپنی سفارشات دیں گے۔