عمران پنجاب میں عبرتناک شکست کو دھاندلی کے شور میں چھپانا چاہتے ہیں: ثناءاللہ

عمران پنجاب میں عبرتناک شکست کو دھاندلی کے شور میں چھپانا چاہتے ہیں: ثناءاللہ

لاہور(خبر نگار+ایجنسیاں)صوبائی وزیرقانون و بلدیات رانا ثناءاللہ نے کہا ہے عمران خان اپنے سیاسی مستقبل کو مخدوش دیکھ کر منفی سیاست کررہے ہیں اور انتخابات میں شکست کے بعد اپنی شرمندگی مٹانے کیلئے ایسی بے سروپا باتیں کر رہے ہیں جن کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں- انہوں نے کہا حقیقت یہ ہے نام نہاد سونامی دفن ہو چکا ہے اور عوام نے اسے انتخابات میں مسترد کر دیا ہے۔ انہوں نے عمران خان کے بیان پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا وہ ایسی منفی باتیں کر کے عوام کی آنکھوں میں دھول نہیں جھونک سکتے۔ عمران خان کو خیبرپی کے، کے انتخابی نتائج قابل قبول ہیں ‘سندھ میں بھی انہیں انتخابی نتائج کے حوالے سے کوئی بڑی شکایت نہیں۔ بلوچستان کے انتخابی نتائج کی وہ بات ہی نہیں کرتے جبکہ پنجاب میں اپنی عبرتناک شکست کو وہ دھاندلی کے شور میں چھپانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا بقول عمران خان یہ انتخابات پاکستان کی تاریخ کے بدترین انتخابات تھے تو وہ کس منہ سے خیبرپی کے میں حکومت بنائے بیٹھے ہیں اور پارلیمنٹ میں بھی موجود ہیں۔ انہوں نے کہا عمران خان کا دوہرا معیار اورکردار یہ ثابت کرتا ہے کہ انہیں اپنی ہی بات کا یقین نہیں۔ انہوں نے کہا عمران خان کو اب اس بات کا خوف کھائے جا رہا ہے کہیں انکے پارٹی کارکن انہیں چھوڑ کر بھاگ نہ جائیں اسلئے یہ اپنے کارکنوں کو طفل تسلیاں دینے کیلئے ایسی باتیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا عمران خان الیکشن سے پہلے خوابوں کی دنیا میں رہتے تھے لیکن انتخابات کے نتائج کے بعد ان کی آنکھیں کھل گئی ہیں اور اب وہ اپنی خفت مٹانے کے لئے دھاندلی کے الزامات عائد کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا عمران خان جمہوریت کی بات کرتے ہیں تو انہیں جمہوریت اور جمہوری اداروں کو غیرمستحکم کرنے کی بجائے مستحکم و مضبوط بنانے کے لئے اپنا کردار بھی ادا کرنا چاہیے۔ انہوں نے عمران کو مشورہ دیا انہیں اپنی جماعت کے اندر ان سوداگروں کی نشاندہی کرنی چاہیے جنہوں نے تحریک انصاف میں پارٹی ٹکٹ دینے اور تبدیل کرنے کیلئے کرپشن کا جمعہ بازار لگایا ہوا تھا۔ انہوں نے کہا ایسی کئی مثالیں موجود ہیں ایک سال سے انتخابی مہم چلانے والے کئی امیدواروں کو دودو کروڑ روپے لینے کے باوجود انتخابی نشان الاٹ ہونے سے ایک دن پہلے ٹکٹ تبدیل کردئیے گئے۔ انہوں نے کہا عمران خان کو اس ضمن میں ثبوت حاصل کرنے میں مشکل پیش آئے تو میں یہ ثبوت فراہم کرنے کو تیار ہوں۔ آئی این پی کے مطابق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رانا ثناءاللہ نے کہا ایم کیو ایم سے باقاعدہ اتحاد ہوا ہے اور نہ ہی ان کو وفاقی کابینہ میں شامل کیا جا رہا ہے، صرف صدارتی انتخاب کے لئے ووٹ مانگا ہے، پنجاب میں سپریم کورٹ کے احکامات کے مطابق بلدیاتی نظام کی منظوری اور بلدیاتی انتخابات کرائے جائیں گے، پیپلزپارٹی کو صدارتی انتخاب میں واضح شکست نظر آئی جس کے بعد بہانہ بنا کر وہ صدارتی انتخاب کا بائیکاٹ کر گئے، ممنون حسین کے صدر بننے سے وفاق مزید مضبوط ہوگا۔