پہاڑجیسے مسائل ورثے میں ملے،تبدیلی آئے گی،ہرگھرمیں چراغ روشن ہوگا تاہم لوڈشیڈنگ کے خاتمے کی تاریخ نہیں دے سکتا.

 پہاڑجیسے مسائل ورثے میں ملے،تبدیلی آئے گی،ہرگھرمیں چراغ روشن ہوگا تاہم لوڈشیڈنگ کے خاتمے کی تاریخ نہیں دے سکتا.

لاہورمیں نظریہ پاکستان ٹرسٹ کے زیراہتمام تقریب سے خطاب کرتے ہوئے میاں نوازشریف نے کہا کہ ملک میں بجلی نہ ہونے سے سارا نظام مفلوج ہوکررہ گیا ہے،ملکی مسائل کوچیلنج سمجھ کرقبول کیا، عوام ہمارے جذبے کوسمجھیں،انہوں نے کہا کہ پہاڑ جیسے مسائل ہمیں ورثے میں ملے ہیں،تبدیلی آئے گی اورہرگھرمیں چراغ روشن ہوگا لیکن لوڈشیڈنگ کے خاتمے کی حتمی تاریخ نہیں دے سکتا،ان کا کہنا تھا کہ ماضی میں ہماری حکومت آئی تومخالفین نے کہا کہ شیرآٹا کھا گیا، اب ڈرتا ہوں کہ اب مخالفیں یہ نا کہہ دیں کہ شیربجلی کھا گیا۔ نوازشریف نے واضح کیا کہ ان کی خواہش ہے کہ بجلی کا بحران کل ہی ختم ہوجائے لیکن بجلی پیدا کرنے کے منصوبوں پروقت لگےگا قوم صبرکرے۔
میٹروبس منصوبے کی بات کرتے ہوئے نوازشریف کا کہنا تھا کہ چارسال کا منصوبہ گیارہ ماہ میں مکمل کیا،بجلی بحران پربھی ایسے ہی کام کریں گے، انکا کہنا تھا کہ ہم دوسرے ممالک کے آگے ہاتھ نہیں پھیلائیں گے بلکہ پاکستان میں غیرملکی سرمایہ کاری لائیں گے،کالاباغ ڈیم پربات کرتے ہوئے نوازشریف کا کہنا تھا کہ مجید نظامی صاحب کہتے ہیں کہ کالا باغ ڈیم کا اعلان کریں لیکن بھاشا ڈیم کا منصبوبہ تیارہے اس پردس سے پندرہ ارب روپے خرچ ہوں گے پریشان ہوں یہ پیسے کہاں سے آئیں گے۔
میاں نواز شریف نے کہا کہ اگر انہیں اپنی ذات عزیز ہوتی تو وہ کبھی یہ چیلنجز قبول نا کرتے لیکن انہیں پاکستان کی اٹھارہ کروڑ عوام عزیز ہیں اس لیے وہ سب کی خوشیوں کے لیے اس میدان خارزار میں اترے ہیں