صدرآصف علی زرداری نے کہا ہے کہ شریف برادران اپنے خریدے ہوئے ججوں کے سوا کسی پر اعتماد نہیں کرتے۔

صدرآصف علی زرداری نے کہا ہے کہ شریف برادران اپنے خریدے ہوئے ججوں کے سوا کسی پر اعتماد نہیں کرتے۔

یہ بات صدر زرداری نے پیپلزپارٹی کے پنجاب سے پیپلزپارٹی کے منتخب ارکان قومی و صوبائی اسمبلی سے بات کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی اور کابینہ کے ارکان بھی موجود تھے۔ اجلاس کے دوران ارکان اسمبلی نے صدر پر اعتماد کا اطہار کرتے ہوئے ایک متفقہ قرارداد پیش کی، جس میں صدر زرداری کو پنجاب میں نئے وزیراعلٰی کے تعینات کا اختیار دیا گیا۔ صدر نے کہا کہ معزول چیف جسٹس افتخار چوہدری کو غیر آئینی طریقہ سے بحال نہیں کیا جا سکتا، شریف برادران نے تصادم کا راستہ اپنا لیا اگر وہ اُن کے پاس آجاتے تو تمام مسائل حل ہو جاتے۔ صدر کا کہنا تھا کہ عدلیہ ملک کا ایک باوقار ادارہ ہے، تمام لوگوں کو اس کا اور اس کے فیصلوں کا احترام کرنا چاہیے مگر شریف برادران نے عدلیہ کو مذاق بنا رکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عدلیہ کی طرف سے ڈاکٹر قدیر کے بارے میں فیصلے کو بین الاقوامی طور پر سراہا نہیں گیا مگر حکومت نے عدلیہ کے اس فیصلے کو بھی احترام دیا۔ اس سے پہلے صدر مملکت سے گورنر سرحد اویس احمد غنی نے بھی ایوان صدر میں ملا قات کی اس ملاقات میں صدر نے کہا کہ حکومت دھشتگردی سمیت تمام تنازعات کو سیاسی مذاکرات کے ذریعہ حل کرنے پر یقین رکھتی ہے۔ صدرمملکت سے ایوان صدر میں پاکستان میں تعینات برطانیہ کے ہائی کمشنر رابرٹ برنکلے نے بھی ملاقات کر کے تازہ ترین سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔