سوات معاہدے سے متعلق امریکی خدشات دور ہوگئے : وزیر خارجہ

واشنگٹن (مانیٹرنگ نیوز) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ سوات معاہدے سے متعلق امریکی خدشات دور ہوگئے ہیں۔ امریکی حکام سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ پہلی دفعہ ہوا ہے کہ سویلین اور ملٹری ریلیشن شپ قائم کی گئی اور بعض معاملات پر باہمی اعتماد میں جو فقدان پایا جاتا تھا‘ اسے دور کیا گیا۔ جب ان معاملات کے حوالے سے ان سے پوچھا گیا تو شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم پر یہ الزام تھا کہ ہم اندر سے طالبا ن سے ملے ہوئے ہیں، اسی طرح افغانستان میں امریکی موجودگی سے متعلق ہمارے کچھ خدشات تھے۔ اس ملاقات میں وہ تمام خدشات دور ہو گئے ہیں اور اب میں ایک نئی امید لے کر پاکستان جا رہا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ اوباما انتظامیہ پاکستان کو وہ سارا سازو سامان دینا چاہتی ہے جس سے دہشت گردی کے خلاف جنگ جیتی جا سکے ، اس مقصد کیلئے بجٹ کے فارن اسسٹنس پروگرام کی مد میں موجود رقم میں اضافہ کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بات چیت میں ڈرون حملوں کے حوالے سے بھی بات کی گئی اور امید ہے کہ بہتر حل نکل آئیگا۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اس اجلاس میں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے کوئی بات نہیں ہوئی، اور نہ ہی پاکستان میں حالیہ سیاسی تلاطم، شریف برادران کی نااہلی یا اس سے متعلق کسی خبر پر امریکی انتظامیہ نے کوئی وضاحت طلب کی ہے ۔