فنڈزدستیاب ہونےپراگلےپانچ سال میں پانچ ہزاراوردو ہزاربیس تک مزیدچودہ ہزارمیگاواٹ پن بجلی قومی نظام میں شامل کرلی جائےگی۔ چیئرمین واپڈا

فنڈزدستیاب ہونےپراگلےپانچ سال میں پانچ ہزاراوردو ہزاربیس تک مزیدچودہ ہزارمیگاواٹ پن بجلی قومی نظام میں شامل کرلی جائےگی۔ چیئرمین واپڈا

واپڈاہاوس لاھورمیں پریس کانفرنس سےخطاب کرتے ہوئےسیدراغب عباس نےکہاکہ ملک میں پانی اوربجلی کی بڑھتی ہوئی ضروریات کےپیش نظربیس منصوبوں پرکام جاری ہے۔ ان منصوبوں کی تکمیل پر بیس ہزارمیگاواٹ سےزائد سستی بجلی پیدا ہوگی اور بارہ ملین ایکڑپانی ذخیرہ کیاجاسکےگا۔ انہوں نے بتایا کہ آئندہ سال کےوسط تک چھ منصوبے مکمل کرلیےجائیں گے جن سےچارسومیگاواٹ بجلی اورایک ملین ایکڑفٹ پانی حاصل ہوگا۔ چیئرمین واپڈاکاکہناتھاکہ پانی وبجلی کےمنصوبوں کےلیےکسی بھی عالمی مالیاتی ادارےنےفنڈزفراہم کرنےسےانکارنہیں کیابلکہ تمام عالمی مالیاتی ادارے کنسورشیم کےذریعےفنڈزکی فراہمی پرغورکررہےہیں۔ انہوں نےکہا کہ صارفین کےذمےاسی بلین روپےواجب الاداء ہیں اگربلوں کےبقایاجات اورٹیکس ریکوری بہترہوجائے توتمام منصوبےبروقت مکمل کرلیےجائیں گے۔ انہوں نےکہاکہ بجلی وپانی کےپندرہ منصوبوں پرکام جاری ہے، جن میں تین منصوبے تعمیرکےلیےتیارجبکہ چارمنصوبےتفصیلی انجینئرننگ ڈیزائن کےمرحلے میں ہیں اوردومنصوبےپبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت مکمل کیےجائیں گے۔