پاکستان ‘ بھارت پیدائشی دشمن نہیں غلط فہمیوں سے دوریاں پیدا ہوئیں : منموہن

پاکستان ‘ بھارت پیدائشی دشمن نہیں غلط فہمیوں سے دوریاں پیدا ہوئیں : منموہن

نئی دہلی (آن لائن + اے ایف پی) بھارتی وزیراعظم من موہن سنگھ نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت پیدائشی دشمن نہیں‘ غلط فہمیوں کے باعث دوریاں پیدا ہو رہی ہیں‘ جنوبی ایشیائی ممالک کو آگے بڑھنا ہے تو باہمی رشتوں کو مضبوط اور ایک دوسرے پر اعتماد کرنا ہوگا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ایک تقریب سے خطاب کرتے بھارتی وزیراعظم نے کہا کہ چین اور پاکستان بھارت کے پڑوسی ملک ہیں اور بھارت دونوں ممالک کیساتھ تعلقات کو مضبوط کرنے کا خواہاں ہے تاہم سرحد پار سے دہشت گردی بھارت کیساتھ چین اور پاکستان کیلئے بھی خطرے کا باعث ہے۔ تینوں ممالک کیلئے ضروری ہے دہشت گردی کے خاتمے کیلئے سنجیدہ اقدامات کریں۔ تینوں جوہری طاقتوں کے درمیان کوئی پیدائشی دشمنی نہیں‘ چند حل طلب مسائل اور غلط فہمیوں کے باعث دوریاں اور مضبوط رشتوں میں دراڑیں پیدا ہو رہی ہیں۔ ضرورت اس امر کی ہے ہم ملکر ان دراڑوں کو ختم کر کے مشترکہ ترقی کی منازل طے کریں اور ایک دوسرے پر اعتماد اور خودمختاری کا احترام کیا جائے۔ اے ایف پی کے مطابق منموہن سنگھ نے روس اور چین کے دورہ سے واپسی پر صحافیوں کے سوالوں کے جواب میں کہا کہ وہ کوئلہ سکینڈل میں پولیس کی تفتیش کا سامنا کرنے کیلئے تیار ہیں۔ واضح رہے کہ اس حوالے سے قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ منموہن کو گواہی کیلئے بلایا جائیگا۔ اس سکینڈل کے حوالے سے گذشتہ ہفتے پولیس نے معروف صنعتکار کمار مینگالم برلا اور سابق کول سیکرٹری پی سی پٹاریکھ کو کول مائننگ رائٹس کے حوالے سے ملزم نامزد کیا تھا۔ منموہن سنگھ نے اس ڈیل کی منظوری دی تھی جس کے تحت برلا کی ہندلکو کمیٹی کو 2005ءمیں ریاستی ملکیتی کوئلے کی کانکنی کے اختیارات ملے تھے۔ منموہن کا کہنا ہے کہ انہوں نے یہ منظوری قواعد کے مطابق دی تھی۔ منموہن نے کہا کہ میں قانون سے بالاتر نہیں، سی بی آئی یا کوئی اور ادارہ اس حوالے سے پوچھ گچھ کرنا چاہتا ہے تو میں کچھ نہیں چھپا¶ں گا۔ انہوں نے اپوزیشن کا مستعفی ہونے کا مطالبہ مسترد کر دیا۔
منموہن