سپریم کورٹ نے حارث سٹیل مل کیس کے ملزم سیٹھ نثارکو گرفتار نہ کئے جانے پر نیب حکام پر برہمی کا اظہار کیا ہے

سپریم کورٹ نے حارث سٹیل مل کیس کے ملزم سیٹھ نثارکو گرفتار نہ کئے جانے پر نیب حکام پر برہمی کا اظہار کیا ہے

پنجاب بینک میں اربوں روپے کی کرپشن کیس کی سماعت چیف جسٹس افتخارمحمد چوہدری کی سربراہی میں قائم تین رکنی بنچ نے کی ۔ اس موقع پر نیب نے پنجاب بنک کے سابق صدر ہمیش خان کو ہتھکڑی لگا کرعدالت میں پیش کیا۔ سماعت کے دوران فاضل عدالت نے کہا کہ جن وکلاء نے ججوں کے نام پر پیسے لئے ہیں ان کے بارے میں تفصیلی رپورٹ عدالت میں پیش کی جائے، اگر نیب نے کارروائی نہ کی تو عدالت خود کارروائی کرے گی ۔ فاضل عدالت نے نیب کی کارکردگی کو غیر تسلی بخش قرار دیا اور کہا کہ نیب کی پراسیکیوشن کا معیار ٹھیک ہوتا تو اتنے لوگ اربوں روپے کی قومی دولت لوٹ کر فرارنہ ہوتے۔ اس موقع پر جسٹس خلیل الرحمان رمدے نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ نیب ان لوگوں سے تعاون حاصل کرے جو ہمارے ٹیلیفون ریکارڈ کرتے ہیں، کیونکہ جو ہمارے ٹیلیفون ریکارڈ کرسکتے ہیں وہ فراڈ کرنے والوں کے فون بھی ریکارڈ کرسکتے ہیں۔ عدالت نے حکم دیا کہ ہمیش خان کو  لاہور واپس لے جائیں اور جمعرات کے روز دوبارہ نیب کورٹ میں پیش کیا جائے ۔ اس دوران ہمیش خان اوران کے اہل خانہ کو ہراساں نہ کیا جائے۔ کیس کی مزید سماعت کل تک ملتوی کردی گئی۔