بھارت سے بجلی خریداری کا معاہدہ ہو گیا تجارت پر بات چیت روک دی: خرم دستگیر

بھارت سے بجلی خریداری کا معاہدہ ہو گیا تجارت پر بات چیت روک دی: خرم دستگیر

لاہور (کامرس رپورٹر+ نوائے وقت رپورٹ) وفاقی وزیر تجارت انجینئر خرم دستگیر نے کہا ہے کہ بھارت سے تجارت کے معاہدے پر بات چیت کا عمل فی الحال  روک دیا ہے، وہاں ہونیوالے انتخابات کے بعد نئی آنے والی حکومت سے نئے سرے سے بات چیت کا آغاز کریں گے، بھارت سے بجلی خریداری کا معاہدہ ہو گیا ہے‘گرڈ سٹیشن کی تعمیر اور ترسیلی لائن بچھتے ہی بجلی خرید لیں گے‘ بھارت سے خام مال منگوانے سے پاکستان کا امپورٹ بل کم ہو سکتا ہے، ایران کے ساتھ تجارتی معاملات کو بہتر بنانے کی کوششیں جاری ہیں، معیشت کی ترقی کے لئے حکومت انقلابی اقدامات اٹھا رہی ہے جسکے آنے والے دنوں میں مثبت نتائج سامنے آئیں گے ۔ لاہور میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ 66سال سے جو معاملات خراب ہوئے وہ چند ہفتے میں ٹھیک نہیں ہو سکتے۔ لیکن حکومت خلوص نیت اور سنجیدگی سے آگے بڑھ رہی ہے۔ پاکستان کی برآمدات کو خطے کی سطح پر آگے بڑھانا چاہتے ہیں ۔ ایران کے ساتھ تجارتی معاملات کو بہتر بنانے کی کوششیں جاری ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت سے تجارت کھلنے سے کشمیر‘ سیاچن اور پانی جیسے دیرینہ مسائل بھی حل ہو سکتے ہیں۔ بھارت سے تجارت کے معاہدے پر فی الحال بات چیت کا عمل روکدیا ہے۔ بھارت میں انتخابات کے بعد نئی آنے والی حکومت سے نئے سرے سے بات کریں گے اور یہ معاہدے پائیدار ہوں گے ۔ ہم چاہتے ہیں کہ اب اگر کبھی بارڈر پر کشیدگی ہو تو بھی تجارت کا راستہ بند نہیں ہونا چاہئے۔ انہوںنے کہا کہ بھارت کو پسندیدہ ملک قرار دینے کا فیصلہ  25ماہ قبل ہو چکا ہے جیسے ہی یہ طے ہو گا منفی لسٹ کا خاتمہ کردیا جائے گا۔ بھارت سے تجارت کے باعث متاثر ہونے والی اشیاء پر اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی لگانے کا حق رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بھارت سے بات چیت کے عمل پاکستان کے کسان اور تجارت کا ہر صورت پر دفاع کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی آٹو موبائل پارٹس اور ٹیکسٹائل کی برآمدات میں دلچسپی ہے ۔ بھارت سے خام مال منگوانے سے پاکستان کا امپورٹ بل کم ہو سکتا ہے ۔ ایک مخصوص لابی تجارت کے معاہدے کیخلاف ہے لیکن حکومت معیشت کی ترقی کے لئے ہر اقدام اٹھائے گی۔ دریں اثناء ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی لاہور آفس میں افسروں سے خطاب کرتے ہوئے خرم دستگیر نے کہا کہ تجارتی تنازعات کے حل کے نظام کو موثر اور جامع بنایا جائے تاکہ ملکی تجارت کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کیا جا سکے۔ وزیراعظم میاں نوازشریف کی ہدایت کے مطابق برآمدات کو دگنا کرنے کیلئے نئی منڈیاں تلاش کی جائیں۔ وفاقی وزیر نے افسروں کو ہدایت کی کہ وہ خود کو جدید دور کے تجارتی تقاضوں سے ہم آہنگ کریں اور پاکستان کی برآمدات بڑھانے کیلئے اپنی تمام تر صلاحیتیں بروئے کار لائیں۔