سپریم کورٹ کی جانب سے شریف برادران کو نا اہل قرار دیے جانے کے بعد ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے شروع ہوگئے

سپریم کورٹ کی جانب سے شریف برادران کو نا اہل قرار دیے جانے کے بعد ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے شروع ہوگئے

سپریم کورٹ کی طرف سے شریف برادران کے خلاف فصیلہ آنے کے فورا بعد مسلم لیگ نون کے کارکنوں کی بڑی تعداد نےگورنرہاؤس کے باہر جمع ہو کر گورنرپنجاب سلمان تاثیراور صدرآصف علی زرداری کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔ مشتعل مظاہرین نےٹائر جلا کر سڑک بلاک کرنے کے علاوہ مال روڈ پر جگہ لگے بینروں کو پھاڑڈالا۔ ڈپٹی سپیکر رانا مشہود کی سربراہی میں ممبران صوبائی اسمبلی نے پنجاب اسمبلی کے باہر احتجاج کیا۔ لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نےدوروزہ ہڑتال کا اعلان کردیا ہے۔ جبکہ انجمن تاجران نے کل لاہور میں ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔ راولپنڈی میں بھی وکلاء کی جانب سے مظاہرہ کیا گیا۔ وکلا نے راولپنڈی بار کے باہر حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔ مشتعل مظاہرین نے راولپنڈی سے اسلام آباد آتے ہوئے فیض آباد پولیس چیک پوسٹ کو آگ لگا کر جلادیا۔ عدالت کے فیصلے بعد ملتان شہرمیں بھی ہنگامے پھوٹ پڑے اورمتعدد مقامات پر مسلم لیگی کارکنوں نے احتجاجی مظاہرےکیے۔ بہاولپورمیں سپریم کورٹ کے جج حاکم شیخ کے گھر کے باہرمظاہرہ اور دھرنا دیا گیا۔ ڈسٹرکٹ بار بھکرنے بھی ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔ مری، گوجرانوالہ، بھلوال، ساہیوال، بہاولنگر، بھکر، کلورکوٹ، سرگودھا، بھیرہ، چنیوٹ، عارف والا، خیرپور، شکارپور، بدین سمیت سندہ کے مختلف شہروں میں ریلیاں نکالی گئیں اور احتجاجی مظاہرے کیے گئے۔ پشاور میں مسلم لیگ نون لائرز فورم صوبہ سرحد نے شریف برادران کی نااہلی کے خلاف پشاور میں ہائی کورٹ کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ مظاہرین نے عدالتی فیصلہ کی مذمت کی اوروفاقی حکومت کے خلاف شدید نعرہ بازی کی۔ ملک بھر کی پولیس کو الرٹ کردیا گیا ہے اوراہم تنصیبات کی سیکیورٹی بڑھا دی گئی ہے۔ وائس چیرمیں پنجاب بار کونسل نے کہا ہے کہ وہ سپریم کورٹ کا فیصلہ نہیں مانتے اور پنجاب بار کونسل نےتین روزہ ہڑتال کا اعلان کیا ہے۔