بجلی گیس کی ”اجتماعی“ لوڈشیڈنگ سے عوام بے حال‘ کاروبار ٹھپ‘ کئی شہروں میں مظاہرے

لاہور ( نیوز رپورٹر / سٹاف رپورٹر) ملک بھر میں بجلی اور گیس کی مرحلہ وار بندش جاری رہی جس سے کاروبار زندگی بُری طرح متاثر ہوا، کئی گھروں مےں گیس نہ ہونے کے باعث چولہے تک نہیں جلے۔ لیسکو ذرائع کے مطابق بجلی کے نظام میں قلت37 سو میگاواٹ ہوگئی ہے اور لاہور میں روزانہ کی بنیاد پر ہر علاقے کے دو دو فیڈر بیک وقت بند کر دیئے جاتے ہیں۔ لاہور میں گزشتہ روز بھی وحدت کالونی، اندرون شہر لوہاری گیٹ، بھاٹی گیٹ، اقبال ٹاﺅن (گلشن بلاک، نشتر، مہران)، باگڑیاں، شالیمار ٹاﺅن، چوہنگ، چوبرجی، ساندہ، گریفن ہاﺅسنگ سکیم، گلشن راوی، داروغہ والہ ، پاکستان منٹ ، ملتان روڈ، جوہر ٹاﺅن، مغل پورہ، جلوموڑ‘ باٹاپور‘ راوی روڈ، شاہدرہ، انگوری باغ سکیم، شالیمار لنک رڈو، بادامی باغ، الحمد کالونی، ٹاﺅن شپ، نواب ٹاﺅن، سنگھ پورہ، پاک نگر، سلطان پورہ، وائرلیس کالونی، سمیت سرحدی علاقوں میں 12 سے 19 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کی جاتی رہی۔ بجلی اور گیس کی بندش کے باعث تاجر ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے رہے ادھر لاہور کے 480 صنعتی یونٹوں کی گیس گذشتہ روز بحال کر دی گئی تاہم گیس پریشر مےں کمی کے باعث کئی سی این جی سٹیشنوں پر گاڑیوں کی لمبی قطاریں دیکھنے کو ملیں، گیس پریشر مےں کمی سے تنگ آئے صارفین اور گھریلو خواتین نے کئی مقامات پر سوئی ناردرن حکام کے خلاف مظاہرے کئے۔ دریں اثناءجماعت اسلامی کوٹ رادھا کشن کے زیراہتمام چودھری مسعود احمد ظفر کی قیادت میں بجلی اور گیس کی لوڈشیڈنگ کے خلاف پل نہر سے گرڈ سٹیشن تک ریلی نکالی گئی جس میں پاور لومز کے مزدوروں‘ تاجروں اور اساتذہ نے بھی شرکت کی۔ مظاہرین نے ٹائر جلاکر سڑک بلاک کر دی۔ پتوکی سے نامہ نگار کے مطابق بجلی اور گیس کی اجتماعی لوڈشیڈنگ کے ریکارڈ ٹوٹ گئے‘ مزدور کام نہ ملنے پر بیروزگار پھر رہے ہیں جبکہ نمازیوں کو وضو کے لئے بھی پانی نہیں ملتا‘ نارنگ منڈی سے نامہ نگار کے مطابق صدر بازار میں بدترین لوڈشیڈنگ کے ستائے ہوئے دکانداروں نے ہڑتال کر دی اور پریس کلب کے سامنے مظاہرہ کیا‘ تاجروں نے کہاکہ حکومت عوامی مسائل کے حل میں ناکام ہو چکی‘ لوڈشیڈنگ نے ہمارے کاروبار تباہ کر دئیے۔ بچیانہ سے نامہ نگارکے مطابق یہاں ایک گھنٹہ بعد 3سے 5گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے جس پر عوام نے شدید احتجاج کیا ہے۔ ننکانہ صاحب سے نامہ نگار کے مطابق یہاں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ 16سے 18گھنٹے تک جا پہنچا ہے جس سے لوگوں کو شدید دشواریوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ کامونکے سے نامہ نگار کے مطابق یہاں 18سے 20گھنٹے بجلی کے علاوہ گیس کی بھی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے جس سے گھروں میں چولہے ٹھنڈے کاروبار زندگی معطل ہو کر رہ گیا ہے۔ ادھر گوجرانوالہ سے نمائندہ خصوصی کے مطابق بجلی پانی اور گسی کی بندش کیخلاف انجمن تاجران سیٹلائٹ ٹاﺅن نے جلوس نکالا جو گوندلانوالہ پر اختتام پذیر ہوا۔ دوسرا جلوس گوندلانوالہ روڈ کے تاجروں اور ملحقہ آبادیوں کے رہائشیوں جبکہ تیسرا جلوس باغبانپورہ اور ملحقہ آبادیوں کے مکینوں نے نکالا۔ مظاہرین نے واپڈا سوئی گیس حکام اور حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور حافظ آباد روڈ بلاک کر دی۔